علامہ اقبال پاکستان نہیں پوری انسانیت کے شاعر ہیں،سروش زاہد

علامہ اقبال پاکستان نہیں پوری انسانیت کے شاعر ہیں،سروش زاہد
 علامہ اقبال پاکستان نہیں پوری انسانیت کے شاعر ہیں،سروش زاہد

  

لاہور(پ ر) علامہ اقبال صرف پاکستان کے قومی شاعر نہیں بلکہ پوری انسانیت کے شاعر ہیں انھوں نے مسلمانوں ہی کے لیے شاعری نہیں کی بلکہ ان کے مخاطب تمام دنیاکے انسان ہیں اور اللہ تعالیٰ سے ان کا شکوہ اورا س کا جواب دراصل لوگوں کو عمل پر آمادہ کرنے کی کوشش ہے ۔ان خیالات کا اظہاروطن عزیز کے لٹل اسکالراور ٹی وی اینکر سروش زاہد نے ترکی سے آئے ہوئے وفد سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ترکی کی استنبول یونیورسٹی سے پنجاب یونیورسٹی میں اردو کا ایک شارٹ کورس کرنے کے لیے آئے ہوئے اس وفد سے سروش زاہد نے فکر اقبال پر انگریزی میں خطاب کیا اور وفد کے ارکان کے سوالوں کے جوابات دیے ۔سروش زاہدنے اپنے خطاب کے دوران علامہ اقبال کی نظم شکوہ اور اس کا انگریزی ترجمہ سنایا اور آخر میں علامہ اقبال کی ایک رباعی کے حوالے سے گفتگوکی

جس میں انھوں نے کہاہے کہ کون جانتاہے کہ حجاز سے میری صورت میں جو ٹھنڈی ہوا آئی تھی وہ دوبارہ آئے گی یا نہیں وہ نغمہ جو ایک بار گنگنایاگیا دوبارہ بھی گنگنایاجائے یا نہیں میری زندگی اپنے اختتام تک پہنچ گئی میرے بعد بھی کوئی دانائے راز آئے گا یا نہیں ،پر اپنی گفتگو کا اختتام کیا ۔سروش زاہد کاکہناتھاکہ ابھی علامہ اقبال کا پیغام سنانہیں گیا جب انسانیت اقبال کا پیغام سن لے گی تو ہمارے معاشروں کی موجودہ صورت تبدیل ہوجائے گی۔سروش زاہد کی گفتگوکے بعد ترک وفد کے شرکا نے ان سے علامہ اقبال کے بارے میں سوالات کیے اور فکر اقبال کے بارے میں مزید جاننے کی خواہش کا اظہار کیا۔

مزید : میٹروپولیٹن 4