انسانیت کی خدمت عین عبادت ہے ،مولانا لطف الرحمان

انسانیت کی خدمت عین عبادت ہے ،مولانا لطف الرحمان

ڈیرہ اسماعیل خان (بیورورپورٹ)اپوزیشن لیڈر خیبر پختونخواہ اسمبلی و ضلعی امیر جے یو آئی مولانا لطف الرحمن نے کہا ہے کہ ڈی آر سی کی خدمات قابل تحسین ہیں ۔اسمبلی میں ڈی آر سی کو سپورٹ کریں گے ۔انسانیت کی خدمت سے معاشرے میں سلجھاؤ لا یاجاسکتا ہے ۔ انسانیت کی خدمت سے بڑ ھ کوئی نیکی نہیں ہے ۔ عبادات کے ساتھ ساتھ معاشرے کی تکالیف کا احساس ہونا بھی ضروری ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈیرہ اسماعیل خان میں ڈی آر سی کے دفتر کے دورہ کے موقع پر منعقدہ تقریب میں مہمان خصوصی کی حیثیت میں کیا ۔اس موقع پر آر پی او ڈیرہ شیر اکبر ،ڈی پی او یاسرآفریدی کے علاوہ ڈی آرسی کے سیکرٹری (ر)سیشن جج احسان اللہ خا ن بابڑ،حاجی اللہ بخش سپل ،حاجی عبدالرشید دھپ ،(ر)ہوم سیکرٹری عبدالکریم خان قصوریہ ،محمد حنیف پیپا ایڈوکیٹ ،سہیل احمد اعظمی کے علاوہ دیگر ممبران موجود تھے ۔تقریب میں مہمانان خصوصی کو محمد حنیف پیپا ،عبدالکریم قصوریہ اور اللہ بخش سپل نے تحائف پیش کئے ۔مولانا لطف الرحمن نے کہا کہ اسلامی قوانین کے نفاذسے ہی لوگوں کو انصاف کا حصول ممکن ہے ہماری جدوجہد بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔انہوں نے کہا کہ ڈی آر سی انتہائی اہمیت کا ادارہ ہے معاشرے کیلئے اس کے کردار کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا ڈی آرسی کے ممبران کی طرف سے لوگوں کے تنازعات کے حل میں ان کے کردار کو خراج تحیسن پیش کرتے ہیں ۔کیونکہ انہوں نے بہت کم وقت میں لوگوں کے تنازعات کو ان کے ڈی آر سی کے ادارے میں بیٹھ کر حل کیا ہے ۔ آر پی او شیر اکبر نے کہا کہ ڈی آر سی جرگہ کی ہی ایک شکل ہے جس میں فریقین کے باہمی مشاورت سے مسائل حل کئے جاسکتے ہیں ۔ڈی آرسی لوگوں کے گھریلوجھگڑوں، معمولی تنازعات جو بعد میں بڑے حادثے کا سبب بن سکتے ہیں کے حل کیلئے بہترین ادارہ ہے ڈی آر سی کو قانونی شکل دی جاچکی ہے ۔ممبران کے مشکور ہیں کہ وہ بغیر کسی لالچ کے لوگوں کے تنازعات کو حل کررہے ہیں ۔تنازعات کے حل کیلئے ڈی آر سی کے ممبران کو پولیس کی مکمل سپورٹ حاصل ہے ۔ سیکرٹری ڈی آر سی (ر)سیشن جج احسان اللہ بابڑ نے کہا کہ ہمارا مقصد دو روٹھے ہوئے بھائیوں میں صلاح کروانا ہے وقت کی ضرورت ہے کہ فریقین میں صلاح کروائی جائے ڈی آر سی میں ہر طبقہ فکر کے لوگ ممبران ہیں جو بلا معاوضہ کام کررہے ہیں ۔ہم دوشمنوں کو دوست بناتے ہیں ۔ ڈی آرسی میں کوئی کوٹ فیس نہیں 650کیسز کا فیصلہ کرچکے ہیں ۔اور تقریباً 1300لوگوں میں مصالحت کرواچکے ہیں ۔جس میں خاندانی کیسز بھی شامل ہیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر