کمپیوٹر ماہر کو اپنی بیگم پر شک، باوجود کوشش ثبوت نہ ملا تو پورے گھر میں خفیہ کیمرے لگادئیے، لگاتے ہی سکرین پر ایسی چیز دیکھ لی کہ زندگی کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا

کمپیوٹر ماہر کو اپنی بیگم پر شک، باوجود کوشش ثبوت نہ ملا تو پورے گھر میں خفیہ ...
کمپیوٹر ماہر کو اپنی بیگم پر شک، باوجود کوشش ثبوت نہ ملا تو پورے گھر میں خفیہ کیمرے لگادئیے، لگاتے ہی سکرین پر ایسی چیز دیکھ لی کہ زندگی کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا

  

نئی دلی (نیوز ڈیسک) جدید ٹیکنالوجی کا استعمال ہماری زندگی کا لازمی حصہ بن چکاہے، یہاں تک کہ بے وفا شریک حیات کو پکڑنے کے لئے بھی لوگوں نے ٹیکنالوجی کا استعمال شروع کر دیا ہے، مگر اس کا نتیجہ بہت صدمہ خیز بھی ہو سکتا ہے۔

اخبار ٹائمز آف انڈیا کے مطابق بنگلور شہر سے تعلق رکھنے والے ایک 31 سالہ سافٹ وئیر انجینئر کو گزشتہ سال فروری سے اپنی بیوی کے کردار پر شک تھا مگر کوئی ثبوت نہ مل رہا تھا۔ اسے کئی شواہد نظر آئے مگر بیوی ان باتوں کو بے بنیاد قرار دیتی رہی۔ کچھ ماہ تک اپنے تحفظات کا اظہار کرنے کے بعد بالآخر اس انجینئر نے بیوی کی جاسوسی کا فیصلہ کیا اور گھر کے مختلف حصوں میں کیمرے لگادئیے۔ ان کیمروں اور بیوی کے موبائل فون کو ریموٹ سرور ٹیکنالوجی کے زریعے اپنے لیپ ٹاپ سے منسلک کیا، اور نگرانی کرنے بیٹھ گیا۔

انجینئر نے اپنے ساتھ پیش آنے والے دردناک معاملے کی تفصیل سناتے ہوئے بتایا کہ اس کی بیوی نے اپنے آشنا کو فون کیا کی اور اسے گھر آنے کو کہا، اور ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ مانع حمل گولیاں لیتا آئے۔ انجینئر نے بتایا کہ کچھ دیر بعد اس کے کیمروں نے بے حیائی کے ایسے منظر دکھائے کہ وہ کانپ اٹھا۔ اس کی بیوی کا آشنا آیا اور انہوں نے پہلے باورچی خانے اور پھر بیڈ روم میں جی بھر کر بے حیائی کی، جبکہ اس دوران خاتون کی تین سالہ بچی بھی گھر میں موجود تھی۔ انجیئیر نے تمام واقعات کے ناقابل تردید ثبوت عدالت میں بھی پیش کردئیے۔

بنگلور شہر کی مصالحتی کونسل کے ایک رکن نے بڑھتی ہوئی طلاقوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے بتایا کہ بے راہ روی اور بدکرداری کی وجہ سے اس رجحان میں اضافہ ہورہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس طرح کے کیس کئی بار ان کے سامنے آئے ہیں، جن میں سے کچھ جوڑے دوبارہ اکٹھے رہنے پر رضامند ہوجاتے ہیں جبکہ کچھ طلاق کا فیصلہ کرلیتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس