کیپٹن (ر)محمدصفدر کی ضمانت قبل ازگرفتاری کی درخواست 4 ستمبر تک منظور

  کیپٹن (ر)محمدصفدر کی ضمانت قبل ازگرفتاری کی درخواست 4 ستمبر تک منظور

  

لاہور(نامہ نگار)سیشن عدالت نے نیب آفس حملہ کیس میں سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کے داماد کیپٹن (ر)محمدصفدر کی ضمانت قبل ازگرفتاری کی درخواست 4 ستمبر تک منظور کرتے ہوئے تھانہ چوہنگ پولیس کو انہیں گرفتار کرنے سے روک دیا عدالت نے ملزم کو 50 ہزار روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کروانے کا حکم بھی دیاعدالت نے آئندہ سماعت پر تھانہ چوہنگ پولیس کو ہدایت کی ہے کہ آئندہ سماعت پر تفتیش کی رپورٹ عدالت میں پیش کی جائے ایڈیشنل سیشن جج شکیل احمد نے کیپٹن (ر) محمدصفدر کی عبوری ضمانت کی درخواست پر سماعت کی،درخواست گزار کا موقف ہے کہ تھانہ چوہنگ پولیس نے نیب آفس پر حملے اور ہنگامہ آرائی کے الزام میں اس کے خلاف بے بنیاد مقدمہ درج کیا، نیب آفس ہے باہر پولیس اہلکاروں نے مریم نواز کی گاڑی پر حملہ کیا، نیب نے ہنگامہ آرائی کا بے بنیاد مقدمہ درج کروایا، گرفتاری کا خدشہ ہے، عدالت سے استدعاہے کہ ضمانت قبل ازگرفتاری کی درخواست منظور کی جائے۔

بعدازاں عدالتی سماعت کے بعد کیپٹن (ر)محمدصفدر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ملک کے وزیراعظم ڈی جی نیب اور دیگر اس میں ملوث ہیں، نیب آفس کے باہر ایسا لگ رہا تھا کہ جیسے ہم سری نگر میں موجود ہوں، اس معاملے میں شہزاد اکبر وعدہ معاف گواہ  بنیں گے تاہم انہیں ڈر ہے کہ کہیں شہزاد اکبر ملک سے بھاگ نہ جائیں۔

 ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میاں نواز شریف کا جب تک لندن میں رزق ہے وہ وہاں رہیں گے۔

مزید :

علاقائی -