پشاور میں پاکستا ن ہاؤسنگ فاونڈیشن کے اشتراک سے 20ہزار گھر تعمیر کئے جائینگے 

پشاور میں پاکستا ن ہاؤسنگ فاونڈیشن کے اشتراک سے 20ہزار گھر تعمیر کئے جائینگے 

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)خیبرپختونخوا کے وزیر ہاوسنگ ڈاکٹر امجد علی  نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت نے کم آمدن رکھنے والے افراد کے لئے گھروں کی سہولت ممکن بنانے کے لئے بینک ہوم فنانس کی سہولت متعارف کی ہے، تاکہ گھروں سے محروم افراد کے لئے چھت کی سہولت ممکن بنائی جاسکے جبکہ نیا پاکستان ہاوسنگ پروگرام کے تحت سوڑیزئی پشاور میں پاکستان ہاوسنگ فاونڈیشن کے اشتراک سے 20 ہزار گھر تعمیر کئے جائینگے، جس کی قرعہ اندازی کا مرحلہ مکمل ہوچکا ہے منصوبے پر 97  ارب روپے کی لاگت ائیگی۔ انہوں نے ان  خیالات کا اظہار مشیر اطلاعات وبلدیات کامران بنگش کے ہمراہ محکمہ ہاوسنگ کی دو سالہ کارکردگی کے حوالے سے پشاور میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر سیکرٹری ہاوٗسنگ داود خا ن اور ڈی جی پروانشل ہاوسنگ اتھارٹی بھی موجود تھے۔ میڈیا بریفنگ سے خطاب میں ڈاکٹر امجد علی کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت میں ہاوٗسنگ کے شعبے پر خصوصی توجہ دی گئی ہے، گھروں کی تعمیر سے صوبے میں صنعتوں کو فروغ حاصل ہوگا اور ملازمتوں کے مواقع پیدا ہونگے۔ ان کا کہنا تھا کہ محکمہ ہاوسنگ کا مقصد شہریوں کیلئے گھروں کی تعمیر اور پلاٹس کی فراہمی سے منافع کمانا نہیں، بلکہ شہریوں کو مناسب قیمت پر بغیر منافع کے گھروں کی سہولت فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سوڑئزئی ہاوسنگ سکیم میں میڈیا کے لئے دو فیصد کوٹہ مختص کیا ہے، جبکہ جلوزئی ہاوسنگ سکیم میں بھی میڈیا کے لئے کوٹہ رکھ رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ جلوزئی ہاوسنگ سکیم میں تقریبا 85 فیصد تعمیراتی کام مکمل ہوچکا ہے، پلاٹس کا قبضہ دسمبر میں دیا جائیگا، انہوں کہا کہ جلوزئی ہاوسنگ سکیم کے ساتھ مزید پانچ ہزار کنال اراضی شامل کی جائیگی۔  ڈاکٹر امجد علی نے کہا کہ نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم کے تحت مختلف اضلاع کی انتظامیہ کو اراضی کی نشاندہی کے لئے مراسلے ارسال کیے گئے ہیں، محکمہ ہاوسنگ نے صوبے کی زرعی زمینوں پر کسی قسم کی ہاوسنگ سکیم نہیں بنائی، تمام سکیمز بنجر زمینوں پر قائم کیے گئی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ وفاقی ایمپلائز ہاوسنگ اتھارٹی کے اشتراک سے نشتر آباد میں 550 فلیٹس پر مشتمل 20 منزلہ عمارات تعمیر کی جائیگی۔ جس پر 15 ارب روپے کی لاگت ائیگی۔ انہوں نے کہاکہ سرکاری ملازمین کے لئے فیز فائیو حیات ٓاباد میں 144 فلیٹس پر تقریبا 90 فیصد تعمیراتی کام مکمل ہوچکا ہے جبکہ سرکاری ملازمین کے لئے سول کورٹر روڈ کوہاٹ پر 96 فلیٹس کا منصوبہ بھی شروع کیا گیا ہے جو 2022 میں مکمل ہوگا۔ مشیر اطلاعات وبلدیات کامران بنگش کا پریس بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہناتھا کہ صوبے میں غیر قانونی ہاوسنگ سکیمز کے خلاف ایف آئی اے کو مراسلہ ارسال کیا ہے۔ صوبے میں غیر قانونی ہاوسنگ سکیمز کے حوالے سے کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کیا جائیگا، انہوں نے کہاکہ  ہاوٗسنگ کے شعبہ کے حوالے سے وزیر اعظم عمران خان نے ایک تفصیلی ایجنڈا دیا ہے، موجودہ حکومت میں گھروں کی تعمیر کے حوالے سے خصوصی توجہ دی گئی ہے، سابقہ حکومتوں نے ہاوسنگ کے شعبے میں نعروں  کے علاوہ عملی طور پر کچھ نہیں کیا جبکہ مو جو دہ حکو مت نے صوبے میں دو ہائی رائز عمارتوں کی تعمیر کی منظوری دی گئی ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -