آنکھ پتھر ہوگئی جلووں کی فرمائش نہ کی

آنکھ پتھر ہوگئی جلووں کی فرمائش نہ کی
آنکھ پتھر ہوگئی جلووں کی فرمائش نہ کی

  

زندگی جس پر ہنسے ایسی کوئی خواہش نہ کی

گھاو سینے میں سجائے گھر کی آرائش نہ کی

نکتہ چینی پر مِری تم اتنے برگشتہ کیوں ہو

کہہ دیا جو کچھ دل میں تھامگر کوئی سازش نہ کی

ایک سے حالات آئے ہیں نظر ہر دور میں

رُک گئے میرے قدم یا وقت نے گردش نہ کی

جھُک گیا قدموں پہ تیرے پھر بھی سر اونچا رہا

آنکھ پتھر ہوگئی جلووں کی فرمائش نہ کی

لاکھ نظروں کو اُچھالاتُو نہ آیا بام پر

سائے سر پٹخا کیے دیوار نے جنبش نہ کی

میں نے جن آنکھوں کو سینے میں اُتارا پھر گئیں

خود کو اپنانے کی اس ڈر سے کبھی کوشش نہ کی

رہ کے محدود وسائل کی مظفرنے بسر 

پاوں پھیلا کر کبھی چادر کی پیمائش نہ کی

شاعر: مظفر وارثی

Zindgi jiss par hansay aisi koi khaahish na ki

Ghaao seenay men sajaay ghar ki araaish na ki

Nukta cheeni par miri tum itnay bargashta kiun ho

Keh dia jo kuch bhi dil men tha magar saazish na ki

Aik say halaat aaey hen nazar har daor men 

Ruk gaey meray qadam ya waqt ne gardish na ki

Jhuk gia qadmon pe terayphir bhi sar ooncha raha

Aankh pathar ho gai jalwon ki farmaaish na ki

Laakh nazron ko uchaala tu na aaya baam par

Saaey sar patkha kiay dewaar nay junbish na ki

Reh k mehdood wasaail ki MUZAFFAR ne basar

Paaon phaila kar kabhi chaadar ki pemaaish na ki

Poet:Muzaffar Warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -