یادِ جاناں سے کوئی شام نہ خالی جائے

یادِ جاناں سے کوئی شام نہ خالی جائے
یادِ جاناں سے کوئی شام نہ خالی جائے

  

دل گرفتہ ہی سہی بزم سجا لی جائے

یادِ جاناں سے کوئی شام نہ خالی جائے

رفتہ رفتہ یہی زنداں میں بدل جاتے ہیں

اب کسی شہر کی بنیاد نہ ڈالی جائے

مصحف رُخ ہے کسی کا کہ بیاضِ حافظ

ایسے چہرے سے کبھی فال نکالی جائے

وہ مروت سے ملا ہے تو جھُکا دوں گردن

میرے دشمن کا کوئی وار نہ خالی جائے

بے نوا شہر کا سایہ ہے مِرے دل پہ فراز

کس طرح سے مِری آشفتہ خیالی جائے

شاعر:احمد فراز

Dil Garifta Hi Sahi Bazm Saja Li Jaaey

Yaad eJaana Say Koi Shaam Na Khaali Jaaey

Rfta Rrafta Yahi Zinda Men Badal Jaatay Hen

Ab Kisi Shehr Ki Bunyaad Na Daali Jaaey

Mashaf e Rukh Hay Kisi Ka Keh Bayaaz e Hafiz

Aisay Chehray Say Kabhi Faal Nikaali Jaaey

Wo Murawwat Say Mila Hay To Jhuka Dun Gardan

Meray Dushman Ka Koi Waar Na Khaalki Jaaey

Benawaa Shehr Ka Saaya Hay Miray Dil Pe FARAZ

Kiss Trah Say Miray Aashufta Khayaali Jaaey

Poet:Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -