یہ لڑکی جو اِس وقت سرِ بام کھڑی ہے

یہ لڑکی جو اِس وقت سرِ بام کھڑی ہے
یہ لڑکی جو اِس وقت سرِ بام کھڑی ہے

  

یہ لڑکی جو اِس وقت سرِ بام کھڑی ہے

اُڑتا ہوا بادل ہے کہ پھولوں کی لڑی ہے

شرمائے ہوے بند قبا کھولے ہیں اس نے

یہ شب کے اندھیرے کے مہکنے کی گھڑی ہے

اک پیرہن سرخ کا جلوہ ہے نظر میں

اک شکل نگینے کی طرح دل میں جَڑی ہے

کھکتا تھا کبھی جس میں تمنا کا شگوفہ

کھڑکی وہ بڑی دیر سے ویران پڑی ہے

شاعر:منیر نیازی

Ye Larki Jo Iss Waqt Sar e Baam Kharri Hay

Urrta Hua Badal Hay Keh Pholon Ki Larri Hay

Sharmaatay  Huay Band Qaba Kholay Khaolay Hen Iss nay

Yeh Shab k Andheray K Mahaknay Ki Gharri Hay

Ik Pairhan e Surkh Ka Jalwa hay Nazar Men

Ik Shakl Nageenay Ki Trah Dil Men Jarri Hay

Kulta Tha Kabhi Jiss Men Tamnna Ka Shagoofa

Khirrki Wo Barri Der Say Veraan Parri Hay

Poet:Munir Niazi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -