نیند آنکھوں میں پریشان پھِرا کرتی ہے

نیند آنکھوں میں پریشان پھِرا کرتی ہے
نیند آنکھوں میں پریشان پھِرا کرتی ہے

  

جب کبھی خواب کی امید بندھا کرتی ہے

نیند آنکھوں میں پریشان پھِرا کرتی ہے

یاد رکھنا ہی محبت میں نہیں ہے سب کچھ

بھول جانا بھی بڑی بات ہوا کرتی ہے

صورتِ دل بڑے شہروں میں رہِ یک طرفہ

جانے والوں کو بہت یاد کیاکرتی ہے

دُور اُداسی کو ملاتی ہوئی اِک راہ گزار

بے چراغی کے بڑے رنج سہا کرتی ہے

شاعر:جمال احسانی

Jab Kabhi Khaab Ki Umeed Bandha Karti Hay

Neend Aankhon Men Pareshaan Hua Karti Hay

Yaad Rakhna Hi Muhabbat Men Nahen Hay Sab Kuch

Bhool Jaana Hi Barri Baat Hua Karti Hay

Soorat e Dil Barray SHehron Men Rah e yaktarfa

Jaanay Waalon Ko bahut Yaad Kia Karti Hay

Door Ujaalon Ko Milaati Hui Ik Raahguzaar

Becharaaghi K Barray Ranj Saha Karti Hay

Poet: Jamal Ehsani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -