شہزادی! ترے ماتھے پر یہ زخم رہے گا | ثروت حسین |

شہزادی! ترے ماتھے پر یہ زخم رہے گا | ثروت حسین |
شہزادی! ترے ماتھے پر یہ زخم رہے گا | ثروت حسین |

  

یہ جو پھوٹ بہا ہے دریا پھر نہیں ہوگا

روئے زمیں پر منظر ایسا پھر نہیں ہوگا

زرد گلاب اور آئینوں کو چاہنے والی

ایسی دھوپ اور ایسا سویرا پھر نہیں ہوگا

گھائل پنچھی تیری کُنج میں آن گرا ہے

اس پنچھی کا دوسرا پھیرا پھر نہیں ہاگا

میں نے خودکوجمع کیا پچیس برس میں

یہ سامان تو مجھ سے یکجا پھر نہیں ہوگا

شہزادی! ترے ماتھے پر یہ زخم رہے گا

لیکن اس کو چومنے والا پھر نہیں ہوگا

ثروت ایسے لوگوں کو تم کیوں ملتے ہو

جیسے ان لوگوں کا ملنا پھر نہیں ہوگا

شاعر:ثروت حسین

(کلیاتِ ثروت حسین)

Ye   JO   Phoot   Baha   Hay   Darya   Phir   Nahen   Ho   Ga

Roo -e -Zamen   Par   Manzar  Aisa   Phir  Nahen   Ho   Ga

Zard   Gulaab   Aor   Aainon   Ko Chaahnay   Waali

Aisi   Dhoop   Aor     Aisa    Sawera   Phir  Nahen   Ho   Ga

Ghaail    Panchi   Tere   Kunj   Men   Aan    Gira   Hay

Iss   Panchi    Ka    Doosra   Phaira   Phir   Nahen   Ho   Ga

Main   Nay   Khud   KO   Jama   Kia    Pachees    Baras   Men

Ye   Samaan   To   Mujh   Say   Yakja   Phir  Nahen   Ho   Ga

Shahzaadi   Tiray   Maathay   Par   Ye    Zakhmn   To   Rahay   Ga

Lekin   Iss   Ko    Choomnay   Wala   Phir Nahen   Ho   Ga

SARWAT   Tum   Apnay   Logon   Say   Youn   Miltay   Ho

Jesay   Unn    Logon   Say   Milna   Phir  Nahen   Ho   Ga

Poer: Sarwat   Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -