جن آنکھوں سے مجھے تم دیکھتے ہو

جن آنکھوں سے مجھے تم دیکھتے ہو
جن آنکھوں سے مجھے تم دیکھتے ہو

  

ترے نزدیک آکر سوچتا ہوں

میں زندہ تھا کہ اب زندہ ہوں

جن آنکھوں سے مجھے تم دیکھتے ہو

میں ان آنکھوں سے دنیا دیکھتا ہوں

یہ صحرا ہے کہ شہرِ سامری ہے

میں آوازوں سے سر ٹکرا رہا ہوں

جسے تم نے ابھی سمجھا نہیں ہے

میں اپنے عہد کا وہ سانحہ ہوں

غمِ اندیشہ ہائے زندگی کیا

تپش سے آگہی کی جل رہا ہوں

وہ کوئی اور ہوگا عکسِ دریا

میں اپنے عکس کو پہچانتا ہوں

شاعر: رسا چغتائی

Tiray Nazdeek Aa KAr Sochta Hun

Main Zinda Tha Keh Ab Zinda Hun

Jin Aankhon Say Mujhay Tum Dekhtay Ho

Main Un Ankhon Say Dunya Dekhta Hun

Ye Sehra Hay Keh Sheh e Saamri

Main Awaazon Say Sar Takra  Raha Hun

Jissay Tum Nay Abhi Samjha Nahen Hay

Main Apnay Ehd Ka Wo Saaniha Hun

Gham Andesha Haey Zindgi Kia

Tapish Say Aag Ki Jall Raha Hun

Wo Koi Aor Ho GA Aks e Darya

Main Apnay Aks Ko Pehchaanta Hun

Poet: Rasa Chughtaai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -