اگر میں تیری امانت ہوں تو پھر سنبھال مجھے

اگر میں تیری امانت ہوں تو پھر سنبھال مجھے
اگر میں تیری امانت ہوں تو پھر سنبھال مجھے

  

بدن کی بھول بھلیّوں سے اب نکال مجھے

یہ قیدِخاک تو کرنے لگی نڈھال مجھے

بگاڑ دے گا زمانہ نگار و نقش مِرے

اگر میں تیری امانت ہوں تو پھرسنبھال مجھے

نجانے کس کے خیالوں میں اس طرح گم ہوں

کہ بھول کر نہیں آتا مِرا خیال مجھے

ترے جمال کو منزل نہ گر کیا ہوتا

تمام عمر نہ ملتی رہِ کمال مجھے

اسیر ہوں میں یہ احساس ہو رہا ہے مجھے

دکھائی دیتا نہیں کسی کا جال مجھے

میں آئنوں کے تکلف میں تک نہ پڑی 

تری نگاہ بتاتی ہے میرا حال مجھے

شاعرہ: حمیدہ شاہین

Badan Ki Bhool Bhalayyon Say ab Nikaal Mujhay

Ye Qaid e Khaak To Karnay lagi Nidhaal Mujhay

Bigaarr Day Ga Zamana Nigaar o Naqsh Miray

Agar Mian Teri Amaanat Hun To Phir  Sanbhaal Mujhay

Na Jaanay Kiss K Khayalon Men Iss Trah Gum Hun

Keh Bhool kar Bhi Aata Nahen Khayaal Mujhay

Tiray Jamaal Ko manzil Na Gar Kia Hota

Tamaam Umr Na Milti Rah e Kamaal Mujhay

Aseer Hun Main Yeh Ehsaas Ho Raha Hay Mujhay

Dikhaai Deta Nahen Hay Kisi Ka Jaal Mujhay

Mian Aainon Men K Takalluf Men aaj Tak Na Parri

Tiri Nighaah Bataati Hay Mera Haal Mujhay

Poetess:Hameeda Shaheen

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -