بارہا شب کو یوں لگا ہے مجھے

بارہا شب کو یوں لگا ہے مجھے
بارہا شب کو یوں لگا ہے مجھے

  

بارہا شب کو یوں لگا ہے مجھے

کوئی سایہ پکارتا ہے مجھے

جیسے یہ شہر کل نہیں ہو گا

جانے کیا وہم ہو گیا ہے مجھے

میں ستاروں کا ایک نغمہ ہوں

بیکراں رات نے سُنا ہے مجھے

میں ادھورا سا ایک جملہ ہوں

اہتماماََ کہا گیا ہے مجھے

دکھ ہے احساسِ جرم ہے کیا ہے

کوئی اندر سے توڑتا ہے مجھے

جیسے میں دیکھتا ہوں آئینہ

یوں ہی آئینہ دیکھتا ہے مجھے

جب میں باتوں سے ٹوٹ جاتا ہوں

کوئی ہونٹوں سے جوڑتا ہے مجھے

سازشیں یہ کسی چراغ کی ہیں

میرا سایہ ڈرا رہا ہے مجھے

وہ مجھے پوچھنے کو آیا تھا

حال اپنا سُنا رہا ہے مجھے

جانے وہ کون تھا دیے کی طرح

راستے میں جلا گیا ہے مجھے

نیند کے حاشیوں میں پچھلے پہر

اک ستارا پکارتا ہے مجھے

اُس نے کیسے سجا سجا کے سلیم

اک غزل کی طرح لکھا ہے مجھے ​

شاعر: سلیم احمد

Barha Shab Ko Yun Laga Hay Mujhay

Koi Saaya Pukaarta Hay Mujhay

Jesay Ye Shehr Kall Nahen Ho Ga

Janay Kia Wehm Ho Gia Hay Mujay

Main Sitaaron KaAik Naghma Hun

Bekaraan Raat Nay Suna Hay Mujhay

MAin Adhoor aSa Aik Jumla Hun

Ehtmaaman Kaha Gia Hay Mujhay

Dukh Hay ,ehsaas e Jurm Hay , Kia Hay

Koi Andar Say Torrta Hay Mujhay

Jesay Main Dekhta Hun Aaina

Yun hi Aain Dekhta Hay Mujhay

JAb MAin Baaton Say Toot Jaat aHun

KOi Honton Say Joorrta Hay Mujhay

Saazshen Ye Kiss Charaagh Ki Hen

Mera Saaya Daraa Raha Hay Mujhay

Wo Mujhay Poochnay Ko Aaya Hay

HAll Apna Suna Raha Hay Mujhay

Jaanay Wo Kon Sa Tha Diay Ki Trah

Raastay Main Jala Gia Hay Mujhay

Neend K Haashion Men Pichlay Pahar

Ik Sitaara Pukaarta Hay Mujhay

Uss Nay Kaisa Saja Saja K Saleem

Ik Ghazal ki Trah Likha Hay Mujhay

Poet: Saleem Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -