تجھ سے اب اور مّحبت نہیں کی جاسکتی

تجھ سے اب اور مّحبت نہیں کی جاسکتی
تجھ سے اب اور مّحبت نہیں کی جاسکتی

  

تجھ سے اب اور مّحبت نہیں کی جاسکتی Tujh Say ab Aor Muhabbat Nahen Ki Ja Sakti

خُود کو اِتنی بھی اذیت نہیں دی جا سکتی Khud Ko Itni Bhi Azyyat NAhen Di Ja Sakti

جانتے ہیں کہ یقین ٹُوٹ رہا ہے دل پر Jaantay Hen Keh Yaqeen Toot Raha Hay Dil Par

پھر بھی اب ترک یہ وحشت نہیں کی جا سکتی Phir Bhi Ab Tark Ye Wehshat Nahen Ki Ja Sakti

حبس کا شہر ہے اور اِس میں کسی بھی صُورت Habs Ka Shehr Hay Aor Iss men Kisi Bhi Soorat

سانس لینے کی سہولت نہیں دی جا سکتی Saans Lenay Ki Mushaqqat NAhen Ki Ja Sakti

روشنی کیلئے دروازہ کھُلا رکھنا ہے Roshni K Liay Darwaaza Khula Rakhna Hay

شب سے اب کوئی اجازت نہیں لی جا سکتی Shab Say Ab Koi Ijaazat Nahen Li Ja Sakti

عشق نے ہجر کا آزار تودے رکھا ہے Eshq Nay Hijr Ka Aazaar To Day Sakta Hay

اِس سے بڑھ کر تو رعایت نہیں دی جا سکتی Iss Say Barrh Kar To Riaaiat Nahen Ki Ja Sakti

شاعر: نوشی گیلانی Poetess: Noshi Gilani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -