حریت رہنما خان سوپوری کا غیر قانونی نظربندوں کی حالت زار پر اظہار تشویش

حریت رہنما خان سوپوری کا غیر قانونی نظربندوں کی حالت زار پر اظہار تشویش

سرینگر (اے پی پی) مقبوضہ کشمیرمیں کل جماعتی حریت کانفرنس کے رہنماء اور جموں وکشمیر پیپلز لیگ کے چیئرمین غلام محمد خان سوپوری نے پارٹی کے غیر قانونی طورپر نظربند رہنماء عبدالرشید ڈار کی جیل میں تیزی سے گرتی ہوئی صحت پر شدید تشویش کا اظہار کیا ہے ۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق غلام محمد خان سوپوری نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ عبدالرشید ڈار کئی امراض میں مبتلا ہیں اور جیل حکام انہیں مناسب خوراک اور علاج معالجے سمیت تمام بنیادی سہولتوں سے محروم رکھا ہوا ہے ۔

انہوں نے پارٹی کارکنوں بشیر احمد چنگال، شیخ محمد یوسف، مسرت عالم ، غلام مصطفیٰ وانی، لطیف احمد کلو، نثار احمد شاہ، فیصل اسلم ، محمد سبحان وانی ، ولی محمد شاہ اورمحمد رستم کی مسلسل غیر قانونی نظربندی کے دوران حالت زار پر بھی افسوس ظاہر کیا ۔ حریت رہنماؤں نے ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ۔ انہوں نے ایشیا واچ سمیت انسانی حقوق کی عالمی اور مقامی تنظیموں سے اپیل کی کہ وہ کشمیر کے سیاسی نظربندوں کی رہائی کیلئے بھارتی حکومت پر دباؤ بڑھائیں اور اپنا اثرورسوخ استعمال کریں۔ ادھر مسلم لیگ جموں وکشمیر کے ترجمان اعلیٰ محمد رفیق گنائی کے اہل خانہ نے انکی مسلسل غیر قانونی نظربندی کی شدید مذمت کرتے ہوئے فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے ۔ انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ رفیق گنائی کو 20اکتوبر کو سرینگر کے علاقے آبی گزر سے گرفتار کر کے جموں کی کوٹ بھلوال جیل منتقل کردیا گیاتھا جہاں وہ مسلسل نظربند ہیں۔انہوں نے کہاکہ رفیق گنائی زیابیطس کے مرض میں مبتلا ہیں اور جیل میں انہیں علاج معالجے کی سہولت سے بھی محروم رکھا جارہا جس کی وجہ سے انکی صحت دن بہ دن گررہی ہے ۔ رفیق گنائی کے اہل خانہ نے انہیں فوری طورپر سرینگر سینٹرل جیل منتقل کرنے کا مطالبہ کیا ۔

مزید : عالمی منظر