انتظامی کنٹرول متعلقہ وزارتوں کو منتقل کیا گیا، ریگولیٹری اتھارٹیز کا کنٹرول اداروں کے پاس ہی رہے گا: خواجہ آصف

انتظامی کنٹرول متعلقہ وزارتوں کو منتقل کیا گیا، ریگولیٹری اتھارٹیز کا ...

اسلام آباد(آئی این پی )وفاقی وزیرپانی و بجلی خواجہ محمد آصف نے کہاکہ اوگرا ،نیپرا سمیت 5ریگولیٹری اتھارٹیز کا انتظامی کنٹرول کابینہ ڈویژن سے منتقل کرکے متعلقہ وزارتوں کے ماتحت کیا گیا،ریگولیٹری کنٹرول اداروں کے پاس موجود رہے گا،معاملہ کو پیچیدہ بنا کر ایشو مت بنایاجائے،حکومت نے اداروں کے اختیارات میں مداخلت نہیں کی،اداروں کے آرڈیننس میں ترمیم صوبوں کی مشاورت سے مشترکہ مفادات کونسل کے تحت ہوگی،سید نوید قمر نے کہاکہ حکومت نے ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے تمام ریگولیٹری باڈیز کا گلا گھونٹ دیا ہے،شاہ محمودقریشی نے کہاکہ حکومت کی جانب سے ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے ریگولیٹری اداروں کا جنازہ نکال دیا ہے۔ وہ گزشتہ روز قومی اسمبلی میں نکتہ اعتراض پر اظہار خیال کر رہے تھے ۔سید نوید قمر نے کہاکہ تمام ریگولیٹری باڈیز حکومت نے ماتحت کرلی ہیں اور اس کی کوئی منظوری نہیں لی اور یہ قانون کی خلاف ورزی ہے،آزادانہ میرٹ پر فیصلہ کرنے کیلئے ریگولیٹری اداروں کو اختیار ہے اور ریگولیٹری اداروں کومتعلقہ وزارت کے ماتحت نہیں کیاجاسکتا لیکن لگتا ہے کہ ملک میں مغل بادشاہت چل رہی ہے،یہ تمام ادارے ایک دن میں نہیں طویل عمل کے بعد بنے ہیں،پتہ نہیں ایک جنبش قلم سے آئین کو بھی روندا گیا اس کو چیلنج کیا جائے گا،ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے ان کو ختم کیا گیا ہے،حکومت اپنے اقدام پر نظر ثانی کرے،اس کا ملک کو فائدہ نہیں ہوگا،مشترکہ مفادات کونسل سے منظوری نہیں لی گئی۔شاہ محمودقریشی نے کہاکہ وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے انتخابی اصلاحات کے حوالے سے رپورٹ پیش کی،حکومت نے ملک کی بہتری کیلئے ہاتھ بڑھایا اور اپوزیشن نے تعاون کیا،دوسری طرف حکومت نے نیپرا،اوگرا اور دیگر ریگولیٹری اتھارٹیزکو ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے اڑادیا اور وزارتوں کے ماتحت کردیا اورآئین کا جنازہ نکال دیا اور اداروں کا بھی جنازہ نکال دیا ہے۔وزیرپانی و بجلی خواجہ آصف نے کہاکہ یہ کابینہ ڈویژن میں ہیں یہ معاملہ مشترکہ مفادات کونسل میں پیش ہوا،صوبوں نے کہاکہ مزید مشاورت کی ضروری ہے،31دسمبر تک صوبوں سے مشاورت کرکے جس ادارے میں بھی ترمیم کی جائے گی مشترکہ مفادات کے ذریعے ہوگی،یہ کابینہ ڈویژن سے متعلقہ وزارتوں میں گئے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر