’میری کرسمس‘ کہنا کیساہے؟بڑے اسلامی ملک کے مفتی نے ایسا فتویٰ دیدیا کہ جان کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے

’میری کرسمس‘ کہنا کیساہے؟بڑے اسلامی ملک کے مفتی نے ایسا فتویٰ دیدیا کہ جان ...
’میری کرسمس‘ کہنا کیساہے؟بڑے اسلامی ملک کے مفتی نے ایسا فتویٰ دیدیا کہ جان کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے

  

کوالالمپور(مانیٹرنگ ڈیسک)جب بھی غیرمسلموں کا کوئی تہوار آتا ہے، ایک بحث چھڑ جاتی ہے کہ آیا اسلام میں غیرمسلموں کو ان کے تہواروں پر مبارکباد دینا جائز ہے یا نہیں۔ اب ملائیشیاءکے مفتی ڈاکٹر ذوالکفلی محمد الباقری نے یہ الجھن دورکرتے ہوئے فتویٰ جاری کر دیا ہے کہ ”شریعت کی رو سے غیرمسلموں کو ان کے تہواروں پر مبارکباد دینا جائز ہے۔“

مزیدپڑھیں:’ٹریفک حادثے کے بعد مجھے مردہ قرار دے دیا لیکن پھر ایک ڈاکٹر نے میری سانسیں بحال کرنے کی کوشش کی تو مجھے لگا میری آنکھوں کے سامنے۔۔۔‘ وہ آدمی جس کی سانس ایک گھنٹے بعد دوبارہ چل پڑی، کیا دیکھا؟ ایسا انکشاف کردیا کہ سن کر رونگٹے کھڑے ہوجائیں

دی ملایا میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق نیشنل فتویٰ کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر ذوالکفلی کا کہنا تھا کہ ”عیسائیوں کو میری کرسمس کہنا یا دیگر غیرمسلموں کو ان کے تہواروں پرمبارکباد دینا اسلام میں جائز ہے۔ مسلمان کارڈز، ای میلز، ٹیکسٹ میسجز سمیت کسی بھی طرح غیرمسلموں کو ان کے تہواروں کی مبارکباد دے سکتے ہیں۔ لیکن اگر یہ خیال رہے کہ ان پیغامات میں غیرمسلموں کے عقیدے کی توصیف نہیں کی جانی چاہیے اور ان کی مذہبی علامات استعمال نہیں کی جانی چاہیئں۔ اس صورت میں مبارکباد جائز نہیں ہو گی۔ غیرمسلموں کو مبارکباد کا پیغام، مبارکباد کے پیغام سے زیادہ کچھ نہیں ہونا چاہیے۔ “

مزید : ڈیلی بائیٹس