سپیکر قومی اسمبلی کی سیکرٹری سیفران کو معطل نہ کرنے پر ایوان سے واک آؤٹ کی دھمکی

سپیکر قومی اسمبلی کی سیکرٹری سیفران کو معطل نہ کرنے پر ایوان سے واک آؤٹ کی ...

  

اسلام آباد(صباح نیوز)سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے بروقت سوالات کے جوابات نہ دینے والے سیکرٹری سیفران کو معطل نہ کرنے کی صورت میں اجلاس سے و اک آؤٹ کی دھمکی دے دی، سپیکر نے انتباہ کیا ہے کہ سیکرٹری کو برطرف کرنے کی قرار داد منظور کرسکتے ہیں ۔ سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے وزارت سیفران کی طرف سے سوالات کے جواب نہ دینے کا سلسلہ جاری رہنے پر برہمی کا اظہار کیا اور کہا کہ سیکرٹری سیفران کو معطل نہ کیا تو احتجاجاًکرسی صدارت سے واک آؤٹ کرجاؤں گا۔ لیفٹیننٹ جنرل (ر)عبدالقادربلوچ نے کہا کہ سوال کا جواب تیار کرلیا گیا ۔ سپیکر قومی اسمبلی نے کہا کہ آخری وارننگ دے رہا ہوں کہ اگر سیکرٹری سیفران کا معطل نہ کیا گیا تو اجلاس کی صدارت نہیں کروں گا۔ لیفٹیننٹ جنرل (ر)عبدالقادربلوچ نے کہا کہ سوال کے جواب کیلئے فاٹا سیکرٹریٹ کو لکھتے ہیں وزیر سیفران پوسٹ آفس ہے ہم بے بس ہیں فاٹا سیکرٹریٹ بروقت جوابات نہ دینے پر ہمیں سینیٹ اور قومی اسمبلی میں شرمندگی کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ سپیکر قومی اسمبلی نے کہا کہ سیکرٹری سیفران پارلیمینٹ کی توہین کررہے ہیں ۔ ان کے خلاف ہاؤس میں تحریک استحقاق اور قرار داد پیش کرنے کی رولنگ جاری کردوں گا۔ سیکرٹری سیفران کو برطرف کرنے کا حکم جاری کردیا جائے گا۔

سپیکر/دھمکی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) اپوزیشن کا فاٹا اصلاحات کا بل ایجنڈے میں شامل نہ کرنے پر قومی اسمبلی کے اجلاس سے8ویں روز بھی واک آؤٹ۔تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کے گزشتہ روز ہونے والے اجلاس میں بھی حکومت کی جانب سے فاٹا اصلاحات کا بل ایجنڈے میں شامل نہیں کیا گیا تھا۔قومی اسمبلی کے اجلاس کے آغاز پر اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے ا ظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ’حکومت پھر فاٹا اصلاحات بل ایوان میں نہیں لائی، اس لیے ایوان میں بیٹھنے سے بہتر ہے ہم لابی میں بیٹھیں‘۔خورشید شاہ نے ایوان سے واک آؤٹ کا اعلان کیا تو تمام اپوزیشن اراکین قائد حزب اختلاف کی سربراہی میں اجلاس سے واک آؤٹ کرگئے بعد ازاں اسمبلی کا اجلاس کورم پورا نہ ہونے کے باعث ملتوی کردیا گیا۔

قومی اسمبلی

مزید :

صفحہ اول -