ریحان موبائل میں پولیس کانسٹیبلوں پر فائرنگ ‘ ایک سرگودھا سے گرفتار‘ پولیس تاحال ملزموں کا کریمنل ریکارڈ نہ پاسکی

ریحان موبائل میں پولیس کانسٹیبلوں پر فائرنگ ‘ ایک سرگودھا سے گرفتار‘ پولیس ...

  

ملتاں (کرائم رپورٹر )تھانہ سیتل ماڑی کے علاقے میں میں واقع ریحان ہوٹل میں پولیس کانسٹبلان پر فائرنگ، پولیس (بقیہ نمبر19صفحہ12پر )

نے سرگودھا سے ایک ملزم کو گرفتار کر لیا ہے جبکہ دیگر کی تلاش جاری ہے پولیس تاحال ملزمان کا کوئی کریمنل ریکارڈ تلاش کرنے میں کامیاب نہ ہو سکی ہے ، دوسری جانب زخمی ہونے والے ہیڈ کانسٹبل تصور حسین کی حالت نشتر میں بہتر بیان کی جاتی ہے، اور سی پی او ملتان نے ایس پی کینٹ ڈاکٹر فہد کو معاملہ کی تحقیقات کرنے کا حکم بھی جاری کیا ہے واضح رہے کہ گزشتہ سے پیوستہ روز جنرل بس اسٹینڈ کا ڈیوٹی محرر مہر محمد اشرف اپنے دوسرے ہیڈ کانسٹبل ساتھی کے ساتھ ہوٹل چیک کرنے گیا جہاں پر اس کی وہاں پر ٹھہرے ہوئے افراد جنید یار، محمد حسن، وسیم ناصر خان کے ساتھ خاتون سندس بی بی کی وجہ سے تلخ کلامی ہوئی جس پر جنید نے پسٹل نکال کر تصور حسین پر فائرنگ کر دی جبکہ دوسرے مہر اشرف کے سر میں پسٹل کا بٹ مار کر زکمی کر دیا ملزمان موقع سے فرار ہو گئے جس پر پولیس نےء مزکورہ خاتون سمیت چار افراد کے خلاف پولیس مقابلہ کا مقدمہ درج کر لیا تھا جس میں ایک ملزم کو گرفتار کر لیا گیا ہے دلچسپ امر یہ ہے کہ پولیس کے اہلکاروں نے افسران کو بتایا کہ ملزما ڈاکوں ہیں اور ڈکیتی کی نیت سے ہوٹل میں ٹھہرے ہوئے تھے مگر پولیس نے سندھ اور پنجاب کے علاقوں میں ریکارڈ چیک کیا ملزمان کہیں بھی اشتہاری نہیں ہیں اور نہ ہی ان کا کوئی کریمنل ریکارڈ موجود ہے سی پی او ملتان سرفراز فلکی نے ایس پی ڈاکٹر فہد کو انکوائری افسر مقرر کرتے ہو ئے اصل معاملے کی چھان بین کرنے کا حکم دیا ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -