چیف جسٹس پرائیویٹ تعلیمی اداروں بار فیصلے پر نظرثانی کریں،محمد اسلم

  چیف جسٹس پرائیویٹ تعلیمی اداروں بار فیصلے پر نظرثانی کریں،محمد اسلم

  

لاہور(پ ر) صدر ایجوکیشنل ویلفیئر سوسائٹی والٹن کینٹ محمد اسلم‘ صدر کینٹ پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشن والٹن کینٹ ملک عبدالعزیز اعوان اور جنرل سیکرٹری چونگی امرسدھو (زون) ملک طارق نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ معزز سپریم کورٹ آف پاکستان نے پاکستان کے تمام کنٹونمنٹ بورڈز سے صرف پرائیویٹ سکولز، کالجز کو رہائشی علاقوں سے بے دخلی کا حکم دیا ہوا ہے۔ جس کی آخری تاریخ 31-12-2021 ہے۔ انہوں نے کہا کہ معزز سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق اس وقت اگر کنٹونمنٹ بورڈز سے سکولز۔ کالجز ختم کر دیئے جاتے ہیں تو تقریباً 40لاکھ طلبا  و طالبات کا تعلیمی مستقبل تاریک ہو جائے گا اور تقریباً 4 لاکھ اساتذہ و دیگر عملہ بے روزگار ہو جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ سکول مالکان تو پھر کوئی نہ کوئی اور کام کر لیں گے۔ لیکن اصل مسئلہ طلباء و طالبات کا ہے کہ وہ کدھر جائیں گے۔ صدر مملکت عارف علوی، چیف جسٹس سپریم کورٹ آف پاکستان‘وزیر اعظم عمران خان‘ چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ و دیگر اعلیٰ حکام سے درخواست کی ہے کہ اس پر فوری طور پر نوٹس لیکر عدالتی احکامات کو ریویو کروائیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -