حقداروں کو  گروپ انشورنس ادا کی جائے پاکستان پنشنرز فورم، حق پاکستان پارٹی 

حقداروں کو  گروپ انشورنس ادا کی جائے پاکستان پنشنرز فورم، حق پاکستان پارٹی 

  

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) ریٹائرڈ ملازمین کی گروپ انشورنس رقم کی حق داروں کو جلد ادا نہ کی گئی تو لاکھوں معذور بزرگ، یتیم بچے اور بیوائیں نوافل حاجات ادا کر کے خداوند باری تعالیٰ سے حکومت و دیگر متعلقہ ذمہ داران سے نجات کی دعائیں اور سڑکوں پراحتجاج کرینگے۔یہ فیصلہ گزشتہ روز مرکزی مجالس عاملہ پاکستان پنشنرز فورم اور حق پاکستان پارٹی کے مشترکہ اجلاس میں کیا کیا گیا۔اجلاس چیئرمین پروفیسر راجہ محمد اسلم خان کی درخواست پر بزرگ پنشنرز اور ممتاز ماہر تعلیم گورنمنٹ پوسٹ گریجوایٹ کالج اصغر مال رالپنڈی کے سابق پرنسپل پروفیسر علیم الدین کی صدارت میں ہوا۔جس میں پنجاب سندھ اور پاکستان کی حکومتوں کی طرف سے  بزرگ پنشنرز بیواؤں پنشنرز اور یتیم بچے بچیوں پنشنرز کی سالہا سال سے گروپ انشورنس کی ان کی اپنی رقوم کی ادائیگی نہ کئے جانے پر افسوس اور بھرپور غم و غصہ کا اظہار کیا گیا اور اس  بات پر حیرت کا اظہار کیا گیا کہ جن ذمہ دار افسران و سیاسی عہدیداران پر عوام کو ان کے حقوق دلانے پر اربوں روپے  خرچ ہو رہے ہیں وہ عوام کے حقوق غصب کرنے میں مصروف ہیں۔مطالبہ کیا گیا کہ اس کرپٹ نظام کو تبدیل کیا جاے۔ فیصلوں کے مطابق پاکستان پنشنرز فورم اور حق پاکستان پارٹی کے چیئرمین نے یہ بھی وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے مطالبہ کیا کہ سستی خورا ک کیلئے مختص کی گئی 106ارب روپے کی امدادی رقم کرپٹ نظام  کے حوالے کرنے کی بجائے سابقہ راشننگ کا نظام بحال کر کے غربت سے  پسے خاندانوں کیلئے راشن کارڈ فوری بنوائے جایں تا کہ ہفتہ وار آدھی قیمت پر آٹا، چینی، گھی اور دالیں صرف ان خاندانوں کو دی جا سکیں گی جن کی آمدن 35 ہزار روپے ماہانہ سے کم ہے۔اس راشننگ کے نظام کی بحالی سے  یہ رقم کرپٹ نظام کے ہڑپ کرنے سے بچ جائیگی۔

 گروپ انشورنس 

مزید :

صفحہ آخر -