بیان حلفی کیس،رانا شمیم نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے تمام ججوں کو مشکوک بنا دیا:چیف جسٹس اطہر من اللہ

بیان حلفی کیس،رانا شمیم نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے تمام ججوں کو مشکوک بنا ...

  

     اسلام آ باد (نیوزایجنسیاں) رانا شمیم بیان حلفی کیس میں چیف جسٹس اسلام آبا ہائیکورٹ اطہر من اللہ نے ریمارکس دئیے ہیں کہ رانا شمیم نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے تمام ججز کو مشکوک کر دیا، یہ ایک اوپن انکوائری ہے، یہ ہمارا احتساب ہے،رانا شمیم نے تاثر دیا کہ ہائیکورٹ کے تمام ججز کامپرومائزڈ ہیں، بادی النظر میں رانا شمیم نے بغیر شواہد بہت بڑا بیان دیدیا، عدالت صحافی سے اس کی خبر کا سورس نہیں پوچھے گی، جو عوامی رائے بنائی جا رہی ہے اسکے کوئی ثبوت ہیں تو پیش کریں۔ پیر کو اسلام آباد ہائیکورٹ میں رانا شمیم بیان حلفی کی خبر پر توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس ااسلام آباد ہائیکورٹ اطہر من اللہ نے کیس کی سماعت کی۔ رانا شمیم کے وکیل لطیف آفریدی نے عدالت کو بتایا کہ بیان حلفی اسلام آباد ہائیکورٹ میں جمع ہو چکا ہے، رانا  شمیم پہلے دن والے اپنے بیان پر قائم ہیں،اصل بیان حلفی سیل کیا ہوا تھا اور اب عدالت کے حکم پر پاکستان لایا گیا ہے۔ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا لفافہ سربمہر اسی حالت میں موجود ہے، ہم نے ابھی تک نہیں کھولا۔ اٹارنی جنرل نے کہا کہ میڈیا کا کردار ثانوی ہے۔رانا شمیم نے مانا ہے کہ اخبار میں جو لکھا گیا وہ انکے بیان حلفی میں موجود ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ رانا شمیم نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے تمام ججز کو مشکوک کر دیا۔ عدالت پہلے بھی واضح کر چکی کہ تنقید سے کوئی گھبراہٹ نہیں ہے۔ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا  یہ ایک اوپن انکوائری ہے، یہ ہمارا احتساب ہے۔ بادی النظر میں رانا شمیم نے بغیر شواہد بہت بڑا بیان دیدیا۔ رانا شمیم نے تاثر دیا کہ ہائیکورٹ کے تمام ججز کامپرومائزڈ ہیں۔کیا اس کورٹ کے کسی جج پر انگلی اٹھائی جا سکتی ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ عدالت صحافی سے اس کی خبر کا سورس نہیں پوچھے گی۔ جو عوامی رائے بنائی جا رہی ہے اسکے کوئی ثبوت ہیں تو پیش کریں۔اگر کچھ نہیں ہے تو عوام کا اعتماد اس عدالت سے ختم نہیں کیا جانا چاہیے،یہ عدالت قانون سے اِدھر ادھر نہیں جائے گی۔ سیکرٹری جنرل پی ایف یو جے  ناصر زیدی نے دلائل میں کہا کہ اظہار رائے کی آزادی پر توہین عدالت نہیں لگ سکتی۔ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ آزادی اظہار رائے اہم ترین بنیادی حق ہے، اس عدالت نے اپنے فیصلوں میں لکھا۔ آزادی اظہار رائے جب پبلک انٹرسٹ سے متصادم ہو جائے تو صورتحال مختلف ہوتی ہے۔عدالت نے رانا شمیم کا بیان حلفی والا سربمہر لفافہ اٹارنی جنرل کی موجودگی میں کھولنے کا فیصلہ کیاہے۔بعد ازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت 28 دسمبر تک ملتوی کردی۔

رانا شمیم کیس

مزید :

صفحہ اول -