بینک الفلاح اور دستگیر میں ٹرانزیکشن کو ڈیجیٹائز کرنے کا معاہدہ 

بینک الفلاح اور دستگیر میں ٹرانزیکشن کو ڈیجیٹائز کرنے کا معاہدہ 

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)بینک الفلاح اور دستگیر ٹیکنالوجیزنےSMEs مرچنٹس اور ان سے منسلک سپلائی چینز کی، اُن کے عملی امور اوربینکنگ سروسز کے حصول میں معاونت اور سہولیات بہم فراہم کرنے کے لیے آپس میں معاہدہ کرلیا ہے۔دستگیر اپنے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی سلوشنز کے ذریعے سپلائی چین مینجمنٹ، آرڈرنگ اور لاجسٹکس کے شعبہ جات کے حوالے سے SMEs کی کارکردگی کو بہتر اور منفعت بخش بنانے کے لیے کام کررہا ہے  اسی کے ساتھ بینک الفلاح، پیمنٹ سلوشنز اور ڈیجیٹل ایسٹس پر اپنی توجہ مرکوز رکھتے ہوئے،دستگیر کے کسٹمرز کے لیے ایسے سلوشنز تیار کررہا ہے جس سے وہ بینکاری اور ادائیگی کے حوالے سے پیش کردہ خدمات حاصل کرنے کے علاوہ کسی پریشانی کے بغیر انتہائی آسان طریقے سے فنانسنگ کی سہولیات سے فائدہ اٹھاسکیں گے۔اس موقع پر بینک الفلاح کے صدر اور سی ای او، عاطف باجوہ نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ،"بینک الفلاح میں، ہم بینکاری اور فنانسنگ کے شعبہ جات میں ڈیجیٹائزڈ ایکو سسٹم کی نمو اور ترقی کے عمل کو آسان اور سہل بنانے کے لیے مسلسل کوشاں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس حوالے سے ہماری توجہ مستحکم انفرااسٹرکچر کی تیاری پر مرکوز ہے،جس کا مقصد نہ صرف ہمارے صارفین بلکہ دیگر اداروں کو بھی سہولیات فراہم کرنا ہے اور انشاء اللہ اس سے ہمیں ملکی معیشت پر مثبت اور دیرپا اثرات مرتب کرنے کا موقع میسر آئے گا"۔دستگیر ٹیکنالوجیز کے بانی،محمد اویس قریشی نے اس موقع پر کہا کہ،"یہ معاہدہ، دستگیر کے لیے ایک سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے، جو ہمیں نہ صرف صارفین کو کلی طور پرسہولیات کی فراہمی کے قابل بناتا ہے بلکہ ساتھ ہی پاکستان میں SMEریٹیلرز کی جانب سے ان مالی امور میں شمولیت کے ہمارے بنیادی مقصد کو بھی تقویت اور فروغ دیتا ہے۔انہوں نے کہاکہ BAFL کی ڈیجیٹل پیمنٹس اور قرضہ جات کی فراہمی کی بھرپورصلاحیت کے ساتھ، ہم نہ صرف آن لائن ٹرانزیکشنزکی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے اسے فروغ دیں گے بلکہ کریانہ کی دکانوں کے مالکان کے لیے بیرونی ورکنگ کیپیٹل تک رسائی کو بہتر بناتے ہوئے اپنی جانب سے فراہم کردہ "آج خریداری، بعد میں ادائیگی"  کی کریڈٹ (قرض) کی سہولت کو بھی وسعت دیں گے۔ہم اُن روایات کو پہلی بار متعارف کراتے ہوئے فروغ دے رہیں جو آنے والے وقتوں میں بالآخر بینکاری اور ای کامرس کے مابین باہمی صنعتی تعاون کے حوالے سے عملی امور کی انجام دہی کے نئے معیارات کا تعین کریں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -