افغانستان کا مسئلہ عالمی استعماریت کا پیدا کردہ،مسائل کے حل کیلئے متفقہ حکمت عملی اپنا نا ہوگی:ساجد نقوی

  افغانستان کا مسئلہ عالمی استعماریت کا پیدا کردہ،مسائل کے حل کیلئے متفقہ ...

  

     راولپنڈی (آئی این پی)قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کہتے ہیں مسئلہ افغانستان کیلئے او آئی سی ممالک کا مل بیٹھنا خوش آئند، خطے میں امن و استحکام کیلئے پرامن افغانستان لازم ہے، اسلامی دنیا جب تک اپنے مسائل کیلئے متفقہ حکمت عملی نہیں اپنائے گی اس وقت دنیا متوجہ نہیں ہوگی، انسانی ترقی کیلئے یکجہتی لازم اصول مگر اقوام متحدہ صرف دن مختص نہ کرے عالمی یوم یکجہتی پر مظلوم کشمیریوں، فلسطینیوں کے حق میں اپنی منظور کردہ قراردادوں پر عملدرآمد کیلئے جرات مندانہ اقدام بھی اٹھائے، جب تک ظالم کے ظلم کا خاتمہ اور مظلوم کو انصاف نہیں ملتا،عالمی یوم یکجہتی صرف دن تک ہی محدود رہے گی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاکستان کی میزبانی میں او آئی سی کے 17ویں غیر معمولی وزرائے خارجہ اجلاس اور علمی یوم یکجہتی پر اپنے پیغام میں کیا۔ قائد ملت جعفریہ پاکستان علام سید ساجد علی نقوی نے کہاکہ اسلامی ممالک سمیت اقوام متحدہ اور اہم ملکوں کے وزرائے خارجہ، نمائندگان اور مبصرین کی پاکستان کی میزبانی میں افغانستان کیلئے ہونیوالی کانفرنس میں شرکت اور متفقہ قرارداد خوش آئند اقدام ہے، افغانستان کا مسئلہ عالمی استعماریت کا پیدا کردہ ہے جس کے اثرات نے پاکستان سمیت پورے خطے کو اپنی لپیٹ میں ایک عرصہ سے لے رکھاہے، قابض افواج کے انخلاء کے بعد افغان عوام کیلئے مشکلات مزید بڑھی ہیں اور بے چینی و اضطراب کی کیفیت ہے اگر افغانستان کے استحکام کیلئے ایسے ہی مزید سنجیدہ اقدامات اٹھائے گئے تو نہ صرف افغانستان بلکہ خطہ میں بھی استحکام آئے گا اس کیلئے ضروری ہے کہ اقوام عالم خصوصاً اسلامی دنیا مسئلہ افغانستان کیلئے تیز ترین اقدامات اٹھائے۔ انہوں نے اقوام متحدہ کے عالمی یوم یکجہتی دن کے موقع پر اپنے پیغام میں کہاکہ اقوام متحدہ جسے دنیا کی رہنمائی کرنا تھی، جسے مظلوم کاساتھ اور ظالم کا ہاتھ روکنا تھا مگر افسوس یہ عالمی فورم صرف بیانات اور مختلف ایام کے مختص کرنے تک رہ گیاہے۔

 ساجد نقوی 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -