کراچی‘ التوا کے شکار سیف سٹی پراجیکٹ پر سنجیدگی سے کام شروع

  کراچی‘ التوا کے شکار سیف سٹی پراجیکٹ پر سنجیدگی سے کام شروع

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)ملک کے معاشی حب کراچی میں 6 سال سے التوا کے شکار سیف سٹی پروجیکٹ پر سنجیدگی سے کام شروع کردیا گیا ہے، جس پر جنوری2022 میں باقاعدہ کام کا آغاز کردیا جائے گا۔اس حوالے سے ذرائع نے بتایاکہ سیف سٹی منصوبہ ایک سال میں مکمل کیا جائے گا، منصوبے پر23ارب روپے لاگت آئے گی، مارچ 2022 سے کیمروں کی تنصیب کا عمل شروع کردیا جائے گا، شہر بھر میں 10سے 12ہزار جدید کیمرے نصب کئے جائیں گے۔اس کے علاوہ شہر قائد کے حساس مقامات پر12 میگا پکسل کیمرے لگائے جائیں گے، کیمرے داخلی و خارجی راستوں اورریڈ زونز میں نصب ہوں گے، منصوبے کے تین کیمرے تین مراحل میں لگائے جائیں گے جو شاہراہ فیصل، ائیر پورٹ سے ضلع جنوبی میں لگائیں جائیں گے۔ذرائع کے مطابق تین ہزار سے زائد کیمرے ضلع غربی، وسطی اور شرقی میں لگائے جائیں گے، تینوں اضلاع میں لگائے جانے والے کیمرے8 سے9 میگا پکسل ہوں گے، اس منصوبے کی منظوری وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ نے دی تھی۔سال 20105میں شروع ہونے والا یہ منصوبہ 6 سال التوا کے بعد شروع ہوگا، کیمروں کی مانیٹرنگ کے لئے سینٹرل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر بھی قائم کئے جائیں گے۔ذرائع نے بتایاکہ کراچی شہر میں اس وقت 538 مقامات پردو ہزار 196 کیمرے لگائے گئے ہیں جس میں ایک ہزار201کے ایم سی، 198 محکمہ آئی ٹی اور 155 سندھ پولیس کے ہیں۔یاد رہے کہ اس سے قبل چھ سال سے منصوبہ محض اجلاسوں تک ہی محدود ہوکر رہ گیا تھا، سیف سٹی منصوبے کو حتمی شکل دینے کے لیے قائم کی گئی کمیٹی کے اب تک لاتعداد اجلاس ہوچکے ہیں لیکن منصوبہ پایہ تکمیل تک نہ پہنچ پا رہا تھا۔ذرائع کے مطابق سیف سٹی منصوبے کی لاگت 10 ارب سے بڑھ کر 30 ارب کے قریب پہنچ چکی ہے، ملک کے دیگر شہروں میں سیف سٹی کے منصوبہ کامیابی سے مکمل کرلیے گئے ہیں۔

مزید :

صفحہ اول -