چاروں مسالک علماء ختم نبوت نے خودکش حملے حرام قرار دیدیے

چاروں مسالک علماء ختم نبوت نے خودکش حملے حرام قرار دیدیے

  

لاہور (وقائع نگار)چاروں مسالک علماءِ ختم نبوت نے خودکش حملوں کو حرام قرار دیدیا،خفیہ تیسرا ہاتھ مذہب کی آڑ میں دہشتگردی کرکے اسلام کو بدنام اور پاکستان کو کمزور کرنے پر تلا ہے ،دینی قوتیں اسلام و ملک دشمن ایجنڈا ناکام بنادیں ، دہشتگردی ملک و قوم پر مسلط کردہ دشمن کی غیر اعلانیہ جنگ ہے،بھارت و دشمن ممالک پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کیلئے افغان سرزمین کو دہشتگردی کا بیس کیمپ بنا رکھا ہے، پوری قوم متحد ہوکردہشتگردی کیخلاف حکومت و پاک فوج کا بھرپور ساتھ دے، ان خیالات کا اظہار کل مسالک ’‘ورلڈ پاسبان ختم نبوت’‘اور تنظیم شہریان لاہور کے زیر اہتمام لاہور پریس کلب میں مولانا محمد زبیر ورک امیر تحریک اتحاد بین المسلمین کی زیر صدارت قومی امن کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے علماء اور دینی جماعتوں کے راہنما قائد ورلڈ پاسبان ختم نبوت علامہ محمد ممتاز اعوان امیر عالمی تحریک تحفظ حرمین علامہ حافظ زبیر احمد ظہیرڈاکٹر فرید احمد پراچہ،چیئرمین شہریان لاہور شفیق رضا قادری،مفتی عاشق حسین رضوی،مولانا محمد یوسف احرار،مولانا عزیز الرحمن ثانی،مولانا محمد حنیف حقانی،مولانا محمد نعیم بادشاہ سلفی،علامہ وقار الحسنین نقوی ،مولانا حسن ہمدانی جعفری،محمدعلی رضا،پیر جمشید احمد نورانی،علامہ شعیب الرحمن قاسمی،حافظ حسین احمد اعوان،پیر ایس اے جعفری اورپیر شان علی قادری نے کہا کہ مذہب اسلام سراسر امن و سلامتی کا ہی مذہب ہے اور اسلام میں ہر قسم کی دہشتگردی،شدت و انتہا پسندی اور خودکش حملے سراسر حرام ہیں ۔دہشتگردوں کا کوئی مذہب دین ،ایمان نہیں اور نہ ہی اسلام کسی بے گناہ کی جان لینے کی اجازت دیتا ہے بلکہ اسلام میں تو ایک انسان کے قتل کو پوری انسانیت کا قتل اور ایک انسان کی جان بچانے کو پوری انسانیت کو بچانا قرار دیا گیا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -