پاکستان سپر لیگ کا فائنل لاہور میں کرانے پرشائقین کرکٹ خوشی سے نہال

پاکستان سپر لیگ کا فائنل لاہور میں کرانے پرشائقین کرکٹ خوشی سے نہال

  

لاہور(سپورٹس رپورٹر) پاکستان سپر لیگ کا فائنل لاہور میں منعقد ہوگا اس فیصلہ کے ساتھ ہی شائقین کرکٹ میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور انہوں نے پاکستان کرکٹ بورڈ کے اس اقدام کا بھرپور خیر مقدم کرتے ہوئے اس فیصلہ کو کرکٹ اور پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کیلئے سودمند قرا ر دیا ہے۔ اس حوالے سے کئے گئے سروے میں شائقین کا کہنا تھا کہ لاہور میں ہی فائنل میچ ہونا چاہئے تھا اور اس سے دہشت گردوں کو یہ پیغا م دیا ہے کہ ہم کسی سے ڈرتے نہیں اور ہم سب دہشت گردی کے خلاف یک جا ن ہیں۔ اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے شفیق اور شہر یار نے کہا کہ یہ ایک مشکل مگر درسست فیصلہ ہے جس کے مستقبل میں اچھے نتائج برآمد ہو ں گے۔ عمیر،نذیر،شکیل اور نبیل نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ ہمیںیقین تھا کہ فائنل لاہور میں ہی ہوگا اور ہم سٹیڈیم جاکر میچ دیکھیں گے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے اپنے فیصلے پر ڈٹ کر اس بات کا عندیہ دیا ہے کہ وہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کیلئے سنجیدہ ہے، آمنہ،نبیلہ اور عزیزہ نے کہا کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کیلے یہ فیصلہ بہت اہم ہے اور موجودہ حالات میں جب دشمن یہ چاہتا تھا کہ پاکستان میں غیر ملکی کھلاڑی کھیلنے کیلئے نہ آئیں پاکستان کرکٹ بورڈ نے یہ فیصلہ کرکے بہت عقلمندی کا ثبوت دیا ہے۔ اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے پنجاب کالج کے طالب علم طارق محمود،محمد احمد ،عمران ،غضنفر بٹ نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے فیصلہ کرکے ہمارے دل جیت لئے ہیں اور دشمنوں کو یہ پیغام دیا ہے کہ وہ جو بھی کرلیں وہ اپنے مذموم عزائم میں کبھی بھی کامیابی حاصل نہیں کرسکتے۔پاکستان کرکٹ بورڈ کے اس فیصلے سے غیر ملکی کھلاڑیوں اور ٹیموں کے لئے بھی راہ ہموار ہوگئی ہے اور اس سے پوری دنیا میں یہ پیغام جائے گا کہ پاکستانی پر امن شہری ہیں اور یہاں پر کھیلوں کو کسی قسم کا کوئی خطرہ نہیں ہے۔عزیز،پرویز،شرجیل،حامد ،سیف اللہ اور کامل نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے درست فیصلہ کیا ہے اور اگر یہ فیصلہ نہ کیا جاتا اور فائنل دبئی میں ہی ہوتا تو پھر انٹرنیشنل کھلاڑیوں کو پاکستان لانا بہت مشکل ہوجاتا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان سپر لیگ کا فائنل لاہور میں کروانے کا سارا کریڈٹ پی ایس ایل کے چیئرمین نجم سیٹھی کو جاتا ہے۔

پاکستان سروے

مزید :

صفحہ اول -