دیوانی تنازعات کو عدالتوں سے باہر طے کرنے سے مقدمات کا بوجھ کم ہو گا : چیف جسٹس

دیوانی تنازعات کو عدالتوں سے باہر طے کرنے سے مقدمات کا بوجھ کم ہو گا : چیف ...

  

 لاہور(نامہ نگار خصوصی )چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ سید منصورعلی شاہ نے کہا ہے کہ دیوانی تنازعات کو عدالتوں سے باہر طے کرنے کے لئے مصالحتی نظام کے فعال ہونے سے عدالتوں پر مقدمات کا بوجھ کم ہوگا اور بروقت انصاف کی فراہمی یقینی بنانا ممکن ہوجائے گا۔ہائی کورٹ بار میں پروفیشنل ٹریننگ پروگرام مکمل کرنے والے وکلاء میں سرٹیفکیٹس تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ جنوبی ایشیاء سمیت پوری دنیا میں زیادہ ترمقدمات کے فیصلے مصالتی نظام کے تحت کئے جاتے ہیں، جلد ہی لاہورسمیت دیگراضلاع میں مصالتی نظام کو فعال کردیاجائے گا۔ چیف جسٹس کا مزید کہناتھا کہ اپریل سے لاہورہائیکورٹ کا کمپوٹرائزڈ نظام بھی تبدیل کردیا جائے گا، کیسز برانچز کی بجائے عدالتیں فکس کریں گی۔لاہورہائیکورٹ بار میں پروفیشنل ٹریننگ مکمل کرنے والے 70وکلاء کو سرٹیفکیٹ تقسیم کرنے کی تقریب منعقد ہوئی ، جسٹس میں چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سید منصورعلی شاہ خصوصی طورپرشرکت کی ،جسٹس شجاعت علی خان ، لاہورہائیکورٹ بار کے عہدیداروں، ظفراقبال کلانوری ایڈوکیٹ ، سابق سیکرٹری ہائیکورٹ بیرسٹراحمد قیوم سمیت وکلاء کی بڑی تعداد بھی اس موقع پرموجود تھی۔

مقدمات کا بوجھ

مزید :

علاقائی -