یونیورسٹیوں کے قیام کا مقصد معاشرے کو جدید علوم اور تحقیق سے آگاہ کرنا ہے : پروفیسر ڈاکٹر اسلم عقیلی

یونیورسٹیوں کے قیام کا مقصد معاشرے کو جدید علوم اور تحقیق سے آگاہ کرنا ہے : ...

  

 پشاور( سٹاف رپورٹر )دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس "انڈسٹریل انجینئرنگ اینڈ مینجمنٹ ایپلی کیشنز" گذشتہ روز مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ،جام شورو (سندھ) میں شروع ہوا۔ کانفرنس دو دن جاری رہی گی جس کا انعقاد یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی پشاور اور مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ،جام شوروکے باہمی روابط سے ہائیر ایجوکشن کمیشن کے تعاون سے کیا گیا ہے۔ کانفرنس کا مقصد محققین اور نوجوان سکالرز کو انڈسٹریل انجینئرنگ کے جدید تقاضوں سے ہم اہنگ کرانا ہے۔پروفیسر ڈاکٹر اسلم عقیلی، وائس چانسلر مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ،جام شورونے اپنے خطاب میں کہا کہ یوینورسٹیوں کا کام محض ڈگریاں اور نئے کورسز متعارف کرانا نہیں ہے بلکہ معاشرے کو جدید علوم اور تحقیق سے آگا کرنا اور اسکو صنعت اور پیشہ وارانہ افراد تک رسائی ہے ۔ اس حقیقت کو جانتے ہوئے مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ،جام شورو نے سات مصنوعات بین الاقوامی سطح پر پیٹنٹ کرائے ہیں ۔ جس کا مقصد انڈسٹری کی ضروریات کو پوراکرنا اور ملکی معیشت کو فائدہ پہنچا نا ہے۔پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین، انجینئر نگ یونیورسٹی پشاور جو کہ کانفرنس کے گیسٹ آف ہانر تھے ، انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان کوغیر تربیت یافتہ انسانی وسائل کی وجہ سے توانائی کے بحران، سست صنعت کاری اور انفراسٹکچر کی کمی کا سامنا ہے ۔جس کو فوری طور پر حل کرنے کی ضرورت ہے جو چین پاکستان اقتصادی راہداری(CPEC) کی صورت میں ہمارے سامنے ہے۔جس میں انڈسٹریل انجینئرز کا ایک اہم کردار ہوگا۔پروفیسر ڈاکٹر حسین بکس مری ،چئیرمین ڈیپارٹمنٹ آف انڈسٹریل انجینئرنگ مہران یو ای ٹی جو کہ کانفرنس کے کنونئیر بھی ہیں نے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کانفرنس دو دن جاری رہی گی جس میں محققین کی جانب سے 85ریسیرچ پیپرز پیش کرائے جائیں گے اور پانچ تیکنیکی سیشن کا انعقاد ہوگا۔پروفیسر ڈاکٹر سحر نور، چےئرمین انڈسٹریل انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹ، یوای ٹی پشاور نے اپنے خطاب میں کہا انجینئرنگ یونیورسٹی کے ماسٹر اور پی ایچ ڈی کے طلباء کی جانب سے کانفرنس میں پانچ ریسریچ پیپرز پیش کئے جائیں گے جو کہ بین الاقوامی جنرلز میں شائع ہونگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -