پاکستانی حملوں کیخلاف افغانستان کا واویلا امریکی کمانڈر نے مسترد کر دیا، شہری نہیں دہشتگرد نشانہ بنائے گئے : جنرل جان نکلسن

پاکستانی حملوں کیخلاف افغانستان کا واویلا امریکی کمانڈر نے مسترد کر دیا، ...
پاکستانی حملوں کیخلاف افغانستان کا واویلا امریکی کمانڈر نے مسترد کر دیا، شہری نہیں دہشتگرد نشانہ بنائے گئے : جنرل جان نکلسن

  

لاہور, کابل (ویب ڈیسک) پاکستان کی جانب سے افغانستان میں قائم دہشت گردوں کے کیمپوں اور ٹھکانوں کیخلاف کارروائی پر کابل انتظامیہ نے عالمی سطح پر واویلا شروع کر دیا اور دعویٰ کیا کہ پاکستان نے عام شہریوں کو نشانہ بنایا جس سے شہریوں کی ہلاکتیں ہوئیں اور املاک کو بھی نقصان پہنچا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ کابل انتظامیہ کے جھوٹے پراپیگنڈا کو کسی نے تسلیم نہیں کیا بلکہ افغانستان میں تعینات نیٹو فورسز کے امریکی کمانڈر جنرل جان نکلسن نے اشرف غنی انتظامیہ کو موثر جواب دیا اور کہا کہ پاکستان نے حالیہ دہشت گردی کی لہر کے بعد باقاعدہ طور پر امریکی حکام کو اعتماد میں لیا اور انہیں افغانستان میں موجود دہشت گردوں کے ٹھکانوں کے بارے میں معلومات فراہم کیں جس پر پاکستان قیادت کو آگاہ کیا گیا، وہ اپنے شہریوں کے قاتلوں کے خلاف کارروائی کا حق رکھتا ہے۔ امریکی کمانڈر نے کہا کہ پاکستان نے صرف دہشتگردوں کو نشانہ بنایا کسی عام شہری پر حملہ نہیں کیا گیا۔

علاوہ ازیں دفاعی تجزیہ کار رحیم اللہ یوسفزئی نے کہا ہے بھارت نے ہیوی و یپن آرٹیلری افغانستان کو دیا ہے جسے اس نے کنٹر اور ننگر ہار میں لگایا، ممکن ہے وہ پاکستانی گولہ باری کا جواب ان کے ذریعے دے ۔ پاکستان اگر ایئرفورس ان علاقوں میں استعمال کرتا ہے تو اس کا سامنا امریکہ سے ہو جائے گا کیونکہ یہاں امریکی فوج قابض ہے ،افغانستان کا رویہ غیر متوقع اور جارحانہ ہے ۔ افغانستان کی موجودہ حکومت نے اسے بھارت کے بہت قریب کر دیا ہے اورہماری اطلاعات کے مطابق افغانستان کے دو علاقوں کنٹر اور ننگر ہار میں جماعت الاحراراور طالبان پاکستان کے دفاتر موجود تھے ۔

افغانی حکومت نے الزام لگایا ہے کہ اس کارروائی میں سویلین ہلاک ہوئے ہیں، افغان حکومت نے کہا ہے کہ ان کے پاس فوجی آپریشن موجود ہے حالانکہ ان کے پاس اتنی طاقت نہیں ہے کہ وہ پاکستان کو آنکھیں دکھائیں وہ کسی اور کی شے پر ایسی دھمکیاں دے رہا ہے۔ معروف تجزیہ کار سلیم صافی نے کہا ہے کہ بھارت افغانستان میں مختلف حیلے بہانوں سے ان کے میڈیا کو استعمال کر کے پاکستان کیخلاف استعمال کر رہا ہے جس سے بھارت کا کام آسان ہو رہا ہے اور وہ ہمارے خلاف کارروائی کرنا چاہتا ہے ملا فضل اللہ اور ٹی ٹی پی کے دیگر کارکنوں کے ٹھکانے افغانستان میں موجود ہیں اب ’’را ‘‘ نے ڈٹ کر ان گروپوں کو سپورٹ کرنا شروع کر دیا ہے اور انہیں پاکستان کیخلاف اکسا رہا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -