لیز تجاوزات ، سپریم کورٹ نے سندھ حکومت کی رپورٹ مسترد کردی

لیز تجاوزات ، سپریم کورٹ نے سندھ حکومت کی رپورٹ مسترد کردی

  

اسلام آباد (این این آئی)سپریم کورٹ آف پاکستان نے سندھ جنگلات اراضی لیز تجاوزات کیس میں سندھ حکومت کی 1863 ایکڑ جنگلات کی پیش کردہ رپورٹ مسترد کرتے ہوئے عدالت نے سندھ حکومت سے جنگلات کی زمین بشمول نقشہ جات طلب کرلی۔بدھ کو سماعت کے دوران جسٹس عظمت سعید شیخ نے کہا کہ سندھ حکومت کی رپورٹ کی تصدیق سیشن ججوں سے کرائیں گے۔جسٹس عظمت سعید شیخ نے کہا کہ سندھ حکومت اراضی واپس نہیں لے سکتی تو جنگلات کو آگے لگا دے۔جسٹس عظمت شیخ نے کہا کہ نہیں معلوم 1863 ایکڑ زمین واپس لی بھی گئی کہ نہیں۔ عدالت نے کہا کہ کیا جادو کی چھڑی سے راتوں رات زمین واپس لی گئی۔ جسٹس عظمت سعید شیخ نے کہاکہ عدالت کے سامنے غلط بیانی کی گئی تو نتایج بھگتنا ہونگے۔جسٹس فیصل عرب نے کہا کہ کیا وزیر اعلیٰ کے حکم پر زمین کو فروخت کیا گیا؟ آفیسر محکمہ جنگلات نے کہاکہ نہیں، کوئی زمین فروخت نہیں کی گئی۔درخواست گزار علی اطہر نے کہاکہ بحریہ ٹاؤن اور ڈی ایچ اے کو دی گئی زمین بھی واپس لی جائے۔ جسٹس عظمت سعید شیخ نے کہاکہ جنگلات کی زمین کا ایک ایک انچ واپس لیا جائے گا، چاہے وہ کسی جج کے پاس ہی کیوں نہ ہو۔ بعد ازاں سپریم کورٹ نے جنگلات کی زمین واپس لینے میں رینجرز کی معاونت فراہم کرنے کی سندھ حکومت کی استدعا مسترد کرتے ہوئے سماعت آئندہ تین ہفتے تک ملتوی کر دی ۔

لیز تجاوزات

مزید :

پشاورصفحہ آخر -