ایم سی بی بینک لمیٹڈ کا 31 دسمبر 2018 کو اختتام پذیر ہونیوالے سال کے مالیاتی نتائج کا اعلان

ایم سی بی بینک لمیٹڈ کا 31 دسمبر 2018 کو اختتام پذیر ہونیوالے سال کے مالیاتی ...

  

لاہور(خصوصی رپورٹ) میاں محمد منشاء کی زیر صدارت مورخہ 20 فروری 2019 کو ایم سی بی بینک لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا اجلاس 31 دسمبر 2018 کو اختتام پذیر ہونے والے سال کے دوران بینک کی کارکاردگی کا جائزہ لینے اور مالیاتی گوشواروں کی منظوری کے سلسلے میں منعقد ہوا۔31 دسمبر 2018 کو ختم ہونے والے سال کے دوران، ایم سی بی بینک لمیٹڈ کا غیر حتمی منافع قبل از ٹیکس 2017 کے 31.01 ارب روپے کے مقابلے میں 3% کے اضافے کے ساتھ 32.06 ارب روپے اور منافع بعد از ٹیکس 21.36 ارب روپے رپورٹ کیا گیا۔سال 2018 کے دوران مائیکرو اکنامک فیکٹرز میں تبدیلی کے ساتھ ڈسکاؤنٹ ریٹ میں 425bps کے اضافے نے مجموعی طور پر اس عرصے میں عملی ماحول کو مشکل بنا دیا۔متوقع سود کی شرح میں تبدیلی کی بیناد پر بینک نے کم مدتی میچورٹیزکے اثاثہ کی بنیاد پر توجہ مرکوز کی جس کے نتیجے میں گذشتہ سال کے نسبت نیٹ انٹرسٹ انکم میں 8% اضافہ ہوا۔ گراس مارک اپ کی جانب بینک نے گذشتہ سال سے 9.2 ارب روپے کا اضافہ رپورٹ ہوا۔ آمدنی کے اثاثوں کے تجزیے سے عیاں ہے کہ ایڈوانسز پر آمدن میں 10 ارب روپے اضافہ رہا ، ابتدائی طور پر اوسطاً ایڈوانسز کا حجم 83 ارب روپے کے اضافے کے ساتھ 92bps کی پیداواری بہتری اہم رہی۔ سرمایہ کاری کی مد میں، تخفیف شدہ اوسطاً حجم 66 ارب روپے کی وجہ سے گراس مارک اپ آمدنی میں مجموعی طور پر 2.2 ارب روپے کی کمی آئی ۔ بینک کے سود کے اخراجات کا بڑھتی ہوئی سود کی شرح کے ساتھ پچھلے سال کی مماثل مدت سے تقابلی جائزہ لینے پر اوسطاً ڈپازٹس میں 69bps اضافہ دیکھنے میں آیا۔ بینک نے گذشتہ سال کے مقابلے میں اپنے اوسطاً ڈپازٹ میں 123 ارب کا اضافہ کیا ۔اوسطاً قرض کے حجم میں گذشتہ سال کے مقابلے میں 84 ارب روپے کی نمایاں کمی دیکھنے میں آئی۔نان مارک اپ آمدن کے بلاک میں اہم حصہ فیس ،کمیشن آمدن اور زرِمبادلہ کے لین دین سے آمدن سے 17.2 ارب روپے رپورٹ کی ہے۔ فیس کی آمدن میں کارڈ سے متعلقہ فیس، ترسیلاتِ زر، ٹریڈ پر کمیشن اور بینکاشورکے اہم اشتراک سے 10% اضافہ دیکھنے میں آیا۔کیپٹل مارکیٹ کی مد میں بینک نے کیپٹل گین ایک ارب روپے ریکارڈ کیا جو گذشتہ سال 3.8 ارب روپے تھا۔زرِمبادلہ کی آمدن میں گذشتہ سال کے مقابلے میں 1.8 ارب روپے (109%) کا ایک صحت مند اضافہ نظر آیا۔بینک کے ایڈمنسٹریٹو اخراجات کی جانب ماسوائے پینشن فند کے افراطِ زر میں اضافے کے ساتھ ساتھ روپے کی قدر میں کمی کے دباؤ اور عملی اخراجات میں اضافے کے باوجود بینک 10% نمو کی شرح حاصل کرنے کے قابل رہا۔

ایم سی بی بینک

مزید :

صفحہ آخر -