بھارت مقبوضہ کشمیر میں اسرا ئیلی طرز کی ہند وآباد کاری سازش پر عمل پیرا

  بھارت مقبوضہ کشمیر میں اسرا ئیلی طرز کی ہند وآباد کاری سازش پر عمل پیرا

  



دہلی(آئی این پی)بھارتی وزیر داخلہ امیت شا نے مقبوضہ کشمیر میں ہندو وں کی آبادکاری کیلئے دس علیحدہ علاقے مختص کئے ہیں۔بی جے پی کی قیادت میں ہندتوا حکومت نازی نظریہ سے متاثر ہوکر مقبوضہ کشمیر میں آبادیاتی تناسب کو بدلنے کیلئے ہر حد کو عبور کر چکی ہے۔ بین الاقوامی میڈیاکے مطابق بھارت کے وزیر داخلہ نے اعلان کیا ہے کہ دہلی کی حکومت مقبوضہ جموں و کشمیر میں ہندووں کو الگ بستی فراہم کریگی۔ مقبو ضہ کشمیر کی آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کی طرف یہ پہلا قدم ہے۔اس سے قبل بھی بھارت غیر کشمیری سرمایہ کاروں کیلئے 60000کنال اراضی پہلے ہی فراہم کرچکا ہے، یہ ایک حقیقت ہے کہ سرکاری فرنٹ مین وہ زمین خریدیں گے۔ایک ہندو مندر کو بھی 1000کنال ارا ضی فراہم کی گئی ہے۔ جموں میں مسلمانوں سے 4ہزار کنال سے زیادہ اراضی ہتھیائی گئی ہے۔ سینئر رہنماء رام مادھو کا کہنا تھا بھارتیہ جنتا پارٹی مسلم اکثریتی وادی کشمیر میں ہندوؤں کو دوبارہ آباد کرنے کیلئے محفوظ کیمپوں کی تعمیر کے منصوبے کو بحال کریگی۔ بی جے پی کے قومی جنرل سیکریٹری برائے کشمیر رام مدھو نے کہاتھا کہ ان کی پارٹی دو سے تین لاکھ ہندوپنڈتوں کو کشمیر میں بسانے کیلئے پر عزم ہے۔

بھارتی آباد کاری سازش

مزید : پشاورصفحہ آخر