صدر ٹرمپ کے سابق مشیر راجر سٹون کو تین سال قید کی سزا

  صدر ٹرمپ کے سابق مشیر راجر سٹون کو تین سال قید کی سزا

  



واشنگٹن(اظہر زمان، بیوروچیف) صدر ٹرمپ کے قریبی ساتھی اور سابق سیاسی مشیر راجر سٹون کو تین سال چار ماہ قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔ واشنگٹن ڈی سی کی خاتون وفاقی ڈسٹرکٹ جج ایمی جیکسن نے ٹرمپ انتظامیہ کی طرف سے مقدمہ ختم کرنے کا دباؤ قبول کرنے سے انکار کے بعد جمعرات کی دوپہر مقدمے کا فیصلہ سنا دیا۔ قبل ازیں صدر ٹرمپ نے اپنے صدارتی اختیارات استعمال کرتے ہوئے ان کی سزا معاف کرنے کا عندیہ دیا تھا۔ 2016ء کے صدارتی انتخابات میں ٹرمپ کی انتخابی ٹیم کی روس سے ملی بھگت کی تحقیقات کرنے والے خصوصی تفتیش کار رابرٹ ملر کی سفارش پر ان کے خلاف مقدمہ دائر کر دیا گیا تھا۔ وفاقی جج نے اپنے فیصلے میں لکھا ہے کہ راجر سٹون کی طرف سے کافی مدت تک ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت تحقیقات کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش محض ایک اکیلا واقعہ نہیں تھا۔ وفاقی جج نے راجر سٹون کو ڈانٹتے ہوئے کہا کہ اس وقت جب ان کے خلاف کریمینل مقدمہ چل رہا تھا وہ پریس کانفرنس اور سوشل میڈیا کے ذریعے ان کا مذاق اڑاتے رہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ مقدمہ کوئی مذاق نہیں تھا اور وہ کانگریس اور عدالت کی توہین کرنے کے بھی مرتکب ہوئے ہیں تاہم راجر سٹون قید کی سزا سنانے کے باوجود وہ بدستور ضمانت پر رہیں گے۔

راجر سٹون سزا

مزید : صفحہ اول