وفاق اور بلوچستان توانائی شعبے کے زیر التواء امور کا جائزہ اجلاس

    وفاق اور بلوچستان توانائی شعبے کے زیر التواء امور کا جائزہ اجلاس

  



 اسلام آباد(آن لائن) وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ و محصولات ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کی زیر صدارت وزارت خزانہ میں ہونے والے اجلاس میں وفاقی حکومت اور بلوچستان کے درمیان توانائی کے شعبے سے متعلق کئی سالوں سے زیر التواء معاملات کے جائزہ کے لئے اجلاس ہوا۔ بلوچستان کے سیکرٹری محکمہ توانائی نے بلوچستان حکومت کی نمائندگی کی جبکہ وفاقی حکومت کی نمائندگی وزیراعظم کے مشیر برائے پٹرولیم ندیم بابر نے کی۔اس موقع پر بلوچستان میں گیس فیلڈز کی لیز میں توسیع، نئے اور پرانے فیلڈز میں بلوچستان حکومت کے حصہ، تیل و گیس کے شعبے میں بلوچستان حکومت کے شیئر، مقامی آبادی کے لئے توانائی کے ٹیرف کو معقول بنانے، پاور پلانٹس کے لئے کوٹہ مختص کر نے اور بلوچستان کے لئے ٹریننگ فنڈ مختص کرنے کے معاملات زیر غور آئے۔ٹریننگ فنڈ کے حوالے سے فیصلہ کیا گیا کہ اس بارے میں تمام تر تفصیلات کو آئندہ دو ہفتوں میں حتمی شکل دی جائے گی۔ تمام معاملات پر تفصیلی بحث و مباحثہ کے بعد وزیراعظم کے مشیر نے فیصلہ کیا کہ بلوچستان کی حکومت اور متعلقہ وفاقی وزرااور لاء ڈویژن کے حکام سے مل کر ایسی تجاویز مرتب کریں گے جن میں اٹھارویں ترمیم کی روح اور نجی پارٹی کے مفادات کو متاثر کئے بغیر وفاق اور صوبوں کو یکساں فائدہ پہنچے۔ بلوچستان حکومت، وفاقی وزراء اور لاء ڈویژن کے حکام ایک ماہ میں اجلاس کر کے ٹھوس تجاویز مرتب کریں گے جنہیں منظوری کے لئے مجاز فورم پر پیش کیا جائے گا۔

جائزہ اجلاس

مزید : علاقائی