مدعی کو مقرر ہ دیت سے کم رقم نہیں دی جاسکتی،قانونی ماہرین

  مدعی کو مقرر ہ دیت سے کم رقم نہیں دی جاسکتی،قانونی ماہرین

  



لاہور(نامہ نگار) قتل کے مقدمات میں "دیت "کے حوالے سے فوجداری قوانین کے ماہر فیصل اقبال باجوہ ایڈووکیٹ نے پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئیکہا کہ ضابطہ فوجداری کی دفعہ 323 کے تحت ٹرائل کورٹ اسلامی قوانین اور ملکی قوانین کے تحت قتل کے مقدمات میں دیت کی رقم کا تعین کرتی ہے، دفعہ 323 کے تحت دیت کی رقم کم از کم 30 ہزار 630 گرام چاندی مقرر کی گئی ہے اور ہر سال اس کا نوٹیفکیشن جاری ہوتا ہے، میاں داؤد ایڈووکیٹ نے کہا کہ عدالت اس معاہدے میں شامل فریقین بشمول گواہوں کو طلب کر کے حلف لیتی ہے اور قانونی طور پر مطمئن ہونے کے بعد مجرم کی جیل سے رہائی کی روبکار جاری ہوتی ہے اگر قتل کے مقدمات میں طے کردہ رقم سے زیادہ دیت کی رقم پر اتفاق کرتے ہیں تو اس پر بھی مجرم پارٹی کو عدالت کے روبرو اپنی رضامندی تسلیم کرنا پڑتی ہے،، عدالت زائد رقم کے معاملے میں مداخلت نہیں کرتی۔انہوں نے کہا کہ بعض اوقات ایسے مقدمات بھی بھی سامنے آئے ہیں جس میں فریقین نے عدالت سے باہر ہی دیت کی رقم طے اور وصول کی اور عدالت میں اللہ کے نام پر معافی کا راضی نامہ جمع کرا دیاہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4