چیف جسٹس نے ’عوامی نمائندگی‘ کیلئے عدالت آنے والےپی ٹی آئی رکن اسمبلی کوبولنے سے کیوں روکا؟

چیف جسٹس نے ’عوامی نمائندگی‘ کیلئے عدالت آنے والےپی ٹی آئی رکن اسمبلی ...
چیف جسٹس نے ’عوامی نمائندگی‘ کیلئے عدالت آنے والےپی ٹی آئی رکن اسمبلی کوبولنے سے کیوں روکا؟

  



کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)چیف جسٹس نے ’عوامی نمائندگی‘ کےلئے عدالت آنے والے تحریک انصاف کے ایم این اے کوبولنے سے روک دیااور کہا یہ اسمبلی نہیں ہے۔سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میںغیرقانونی تعمیرات کیس کی سماعت ہوئی تو پی ٹی آئی رہنما فردوس شمیم نقوی بھی عدالت میں پیش ہوگئے۔

چیف جسٹس نے ان سے استفسار کیا کہ آپ کون ہیں؟فردوس شمیم نقوی نے جواب دیا کہ وہ تحریک انصاف کے رکن اسمبلی ہیں اور عوام کی نمائندگی کرنا چاہتے ہیں۔چیف جسٹس نے فردوس شمیم نقوی سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا آپ تو حکومت میں ہیں جس پر فردوس شمیم نے کہا ہم وفاقی حکومت میں ہیں ، یہ سندھ حکومت کامعاملہ ہے۔

اس پرجسٹس سجاد علی شاہ نے فردوس نقوی سے کہا کہ یہ منصوبہ بھی تو وفاقی حکومت کا ہے،آپ اپنے خلاف خود رونے آئے ہیں؟چیف جسٹس نے کہایہ اسمبلی نہیں ،آپ ان سے ملاقات کرکے معلومات لے لیں۔ جبکہ چیف جسٹس گلزاراحمد نے فردوس شمیم نقوی کومزید بولنے سے بھی روک دیا۔

مزید : قومی /علاقائی /سندھ /کراچی