ثقافتی میراث کے طور پر مادری زبانوں کی حیثیت مسلمہ ہے، اعجاز قریشی 

ثقافتی میراث کے طور پر مادری زبانوں کی حیثیت مسلمہ ہے، اعجاز قریشی 

  

پشاور(سٹی رپورٹر)قومیت کی شناخت اور بیش قیمت تہذیبی و ثقافتی میراث کے طور پر مادری زبانوں کی حیثیت مسلمہ ہے،پاکستان سمیت صوبے میں بولی جانے والی ہر زبان اپنی شناخت اور مقام رکھتی ہے اورجن اقوام نے اپنی زبان کا تحفظ کیا ہے اور ان کی ترویج و ترقی کیلئے کردار ادا کیا ہے اُنہوں نے کامیابیاں حاصل کی ہیں۔بے شک زبان شناخت کا نہایت اہم ترین ذریعہ ہے جس کو کسی طور فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ ان خیالات کا اظہار گندھارا ہندکو بورڈ کے چیئرمین اعجاز احمد قریشی، جنرل سیکرٹری محمد ضیاء الدین،جوائنٹ سیکرٹری احمد ندیم اعوان،ملک رضا خان گجر،سابق ممبر صوبائی اسمبلی محترمہ صابرہ شاکر اوردیگر مقررین نے دو روزہ 9 ویں کے پی کے لینگویجز و کلچرز کانفرنس کے موقع پر کیا۔اُنہوں نے کہا کہگندھارا ہندکو بورڈ اور اکیڈمی علاقائی زبانوں کی ترقی اور فروغ کے مشن کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔گندھارا ہندکوبورڈ 8کامیاب کے پی کے لینگویجز کانفرنس کا انعقاد کرچکا ہے جبکہ 9 ویں کے پی کے لینگویجزکانفرنس بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے۔اس کے علاوہ گندھارا کے تحت 400 سے زیادہ مختلف زبانوں کی کتب  کے ساتھ ساتھ رسائل و جرائد بھی شائع ہو رہے ہیں۔ خیبر پختونخوا میں درجنوں زبانیں بولی جاتی ہیں،اور گندھارا ہندکو بورڈ اور اکیڈمی تمام زبانوں کی نمائندگی کر رہے ہیں۔کانفرنس میں گندھارا ہندکو اکیڈمی کے ڈائریکٹر ڈاکٹر محمد عادل نے 4 اینڈرائیٹس ایپس کا افتتاح بھی کیا،جن میں ہندکو اردو لغت ایپ، گنجینہ سائیں ایپ،ہندکووان پروڈکشنز ایپ اور موضوعات قرآن ہندکو ایپس شامل ہیں۔کانفرنس میں مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔اس موقع پرمقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ خیبر پختونخوا کی چھوٹی زبانیں معدوم ہورہی ہیں جن کے تحفظ کیلئے کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔گندھارا ہندکو بورڈ نے تمام زبانوں کو ایک ہی پلیٹ فارم تلے اکٹھا کر کے زبانوں سے محبت کا ثبوت دیا ہے۔گندھارا ہندکو بورڈ کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائینگی،9 ویں کے پی کے لینگویجز و کلچرز کانفرنس صوبے کی زبانوں اور ثقافتوں کی ترقی میں سنگ میل ثابت ہوگی۔یاد رہے کہ  گندھارا ہندکو بورڈ اور گندھارا ہندکو اکیڈمی پشاورکے زیر اہتمام2 روزہ کے پی کے لینگویجز و کلچرز کانفرنس کلچرل ہال پشاور میں شروع ہو گئی ہے۔ کانفرنس کے کنوینئر گندھارا ہندکو بورڈ کے جنرل سیکرٹری محمد ضیاء الدین اور ڈپٹی کنوینئر انعام اللہ ہیں۔کانفرنس کے پہلے دن نظامت کے فرائض احمد ندیم اعوان، انعام اللہ اور محترمہ طاہرہ رفعت نے سرانجام دئیے۔پہلے سیشن کی صدارت گندھارا ہندکو بورڈ کے چیئرمین اعجاز احمد قریشی نے کی،مہمان خصوصی رزوال کوہستانی جبکہ مہمان اعزازپروفیسر ثمینہ عفت تھیں۔سٹیج پرمحمداختر نعیم،ڈاکٹر بسمینہ سراج،پروفیسر اورنگزیب حسام حُر،محمد ضیاء الدین،ڈاکٹر خالد خان خٹک موجود تھے۔دوسرے سیشن کی صدارت روزی خان برکی نے کی، مہمان خصوصی ملک رضا خان گجر جبکہ مہمان اعزازمحترمہ صابرہ شاکر تھیں۔کانفرنس کے دونوں سیشنز میں شہزادہ تنویر الملک، ملا ادینہ شاہ،ڈاکٹر محمد عادل،ڈاکٹر بسمینہ،عبدالخالق ہمدرد، روزی خان برکی،ڈاکٹر محمد کمال خان،ڈاکٹر ضیاء الرحمن بلوچ،ڈاکٹر واجد تبسم،ڈاکٹر حاکم علی بریرو اور دیگر نے اپنے مقالہ جات پیش کئے۔سیشنز کے اختتام پر مہمانوں میں شیلڈ،سرٹیفیکیٹ اور گندھاراہندکو بورڈ کی خصوصی ڈائری بھی پیش کی گئی۔ یاد رہے کہکانفرنس آج بھی جاری رہے گی آج بھی مختلف زبانوں کے محققین و سکالرز مقالات پیش کرینگے جبکہ کانفرنس کے آخر میں علاقائی موسیقی کا بھی اہتمام کیا گیا ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -