معصوم سے چہرے والی اس مسلمان لڑکی نے ایسا خوفناک ترین کام کر ڈالا کہ جان کر آپ بھی کانپ اُٹھیں گے

معصوم سے چہرے والی اس مسلمان لڑکی نے ایسا خوفناک ترین کام کر ڈالا کہ جان کر آپ ...
معصوم سے چہرے والی اس مسلمان لڑکی نے ایسا خوفناک ترین کام کر ڈالا کہ جان کر آپ بھی کانپ اُٹھیں گے

  

برلن(مانیٹرنگ ڈیسک) شام و عراق میں برسرپیکار تنظیم داعش کے شدت پسند یورپی ممالک میں دہشت گردی کی کئی وارداتیں کر چکے ہیں۔ اب جرمنی میں داعش کے پراپیگنڈے سے مرعوب ایک 16سالہ مسلمان طالبہ نے ایسا خوفناک کام کر ڈالا ہے کہ ہر سننے والا کانپ اٹھے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق صفیہ نامی اس مراکشی نژاد لڑکی کو پولیس نے ایک ناکے پر روک کر اس کی چیکنگ کرنی چاہی، اس پر صفیہ نے اپنے پاس چھپائے ہوئے چاقو سے ایک خاتون پولیس آفیسر کا گلہ ہی کاٹ ڈالا۔ موقع پر موجود دیگر آفیسرز نے ملزمہ کو قابو کر لیا جس کے باعث خاتون پولیس آفیسر کی جان بچ گئی تاہم اسے کئی دن ہسپتال میں موت و حیات کی کشمکش میں گزارنے پڑے۔

افغانستان سے 35 لڑکیاں ایک ایسا کام کرنے کے لئے یورپ پہنچ گئیں کہ ملک میں ہنگامہ برپاہوگیا

رپورٹ کے مطابق یہ واقعہ جرمنی کے شہر ہینوور (Hannover)میں پیش آیا۔ لڑکی کو گرفتار کرکے عدالت میں پیش کیا گیا جہاں اب اسے اقدام قتل اور دہشت گردی کی حمایت کرنے کا مجرم قرار دے دیا گیا ہے۔ پراسیکیوٹرز نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ اسے کم از کم 6سال قید کی سزا دی جائے۔ صفیہ کی نشاندہی پر اس کے ایک 19سالہ ساتھی محمد حسن کو بھی گرفتار کیا گیا تھا جسے خاتون پولیس آفیسر پر حملے کی منصوبہ بندی اور صفیہ کی معاونت کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے۔اسے 3سال قید کی سزا دینے کی استدعا کی گئی ہے۔ دونوں کو اگلے ہفتے سزا سنائی جائے گی۔ پولیس نے عدالت میں بتایا ہے کہ ”صفیہ اور محمد حسن شام جا کر داعش میں شامل ہونا چاہتے تھے لیکن پولیس کی چیکنگ کی وجہ سے ان کا منصوبہ ناکام ہو گیا جس پر انہوں نے انتقامی کارروائی کرتے ہوئے پولیس پر حملے کی منصوبہ بندی کی اور صفیہ نے اس منصوبہ بندی کو عملی جامہ پہناتے ہوئے خاتون پولیس آفیسر کا گلہ کاٹ دیا۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس