سبکی پہ سپکی ہزیمت پر ہزیمت، خفت مٹانے کیلئے بھارت کا ایک اور اوچھا ہتھکنڈا

سبکی پہ سپکی ہزیمت پر ہزیمت، خفت مٹانے کیلئے بھارت کا ایک اور اوچھا ہتھکنڈا

  



دہلی(آئی این پی)بھارت نے پاکستان کیخلاف ہرزہ سرائی کرتے ہوئے گرفتار بھارتی پولیس افسر کے آئی ایس آئی کیساتھ تعلقات کا ا لز ا م عائد کیا ہے،1990 میں دیویندر سنگھ نے مبینہ طور پر پاکستانی محمد کو کشمیر سے نئی دہلی تک پہنچانے کیلئے مدد کی تھی۔ محمد 2001میں ہوئے پارلیمنٹ حملے میں ملوث تھا۔ دیویندر سنگھ نے مبینہ طور پر چار کشمیری حریت پسندوں کی بھی مدد کی تھی جنہیں یکم جولائی 2005کو دہلی،گرو گر ا م سرحد پر اسلحہ اور جعلی کرنسی سمیت گرفتار کیا گیا تھا،گرفتار عسکریت پسندوں میں سے ایک کی شنا خت غلام معین الدین ڈار کے طور پر ہوئی تھی۔ ان کی تحویل سے ایک وائرلس سیٹ، ایک پستول اور ایک خط بر آمد کیا گیا تھا۔ایجنسیوں کی طرف سے الزام لگایا جارہا ہے خط پر دیویندر سنگھ کے دستخط تھے اور تفتیشی ایجنسی نے وائر لیس ہینڈسیٹ، پستول اور خط کو فارینزک جانچ کیلئے بھیجا ہے کیونکہ یہ خط جموں و کشمیر کے پولیس کے لیٹر ہیڈ پر ٹائپ کیا گیا تھا اور اس پر دیویندر سنگھ نے دستخط کیے تھے۔ یہ چاروں افراد جموں کی طرف جا رہے تھے اور ان کی تحویل سے اسلحہ بھی برآمد کیا گیا۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق ایجنسیوں کا کہنا ہے معطل ڈی ایس پی دیو یند ر سنگھ 2019 میں تین بار بنگلہ دیش گئے اور وہ کئی دن وہاں رہے ہیں۔ ان کی دو بیٹیاں بنگلہ دیش میں پڑھائی کر رہی ہیں لیکن سکیورٹی ادار و ں کو خدشہ ہے کہ اس دورے کا اصل مقصد آئی ایس آئی کیساتھ تعلقات ہو سکتا ہے۔قومی تفتیشی ایجنسی نے دیویندر سنگھ کیخلاف باضابطہ طور پر مقدمہ درج کر کے آئی ایس آئی کیساتھ مبینہ تعلقات کی تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ڈی ایس پی دیویندر سنگھ کو 11جنوری کو حزب المجاہدین کے کمانڈر نوید بابو، عاطف نامی عسکریت پسند اور وکیل عرفان میر کیساتھ گرفتار کیا گیا۔بھارتی وزارت داخلہ سے احکامات موصول ہونے کے بعد این آئی اے نے مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کردی ہے۔مقبوضہ کشمیر پولیس اور دیگر ایجنسیز نے دیویندر سنگھ کے بینک اکاونٹس کوبھی چیک کیا ہے۔ایجنسیوں کوان کے گھر سے 7.5لاکھ روپے ملے ہیں۔

بھارت ہتھکنڈا

مزید : صفحہ آخر