مخالفین کا پٹاخے سے حملہ‘ 14سالہ لڑکی جھلس کر زخمی

مخالفین کا پٹاخے سے حملہ‘ 14سالہ لڑکی جھلس کر زخمی

  



روہیلانوالی (نامہ نگار)مقدمہ بازی کی رنجش پر نا معلوم افراد نے محنت کش کی بیٹی پر پٹاخہ نما مواد پھینک دیا 14 سالہ شبنم بی بی کا جسم متاثر ہوا۔نواحی علاقہ کبیر پور کی کالونی کے کش محمد افضل بلوچ حجانہ جو ٹریکٹر پر ڈرائیوری کرتا ہے جس کی سجاد بلوچ کے ہمراہ مقدمہ بازی چل رہی ہے اور افضل بلوچ کی بیٹی 4 سالہ شبانہ بی بی اذان کے وقت گھرسے باہر نکلی تو نا معلوم افراد نے کوئی پٹاخہ نما مواد پھینکا اور (بقیہ نمبر47صفحہ12پر)

ایک دم آگ کا شعلہ نکلا اور زور دار آواز آئی جس سے اس کے کپڑے اور جسم بال جھلس گئے محنت کش افضل بلوچ نے 15 پر کال کی اور خانگڑھ کے پولیس کے تفتیشی نور حسین گجر آگئے اور 14سالہ شبانہ اور اس کی والدہ والد افضل کو تھانہ خانگڑھ لے آئے اور رپٹ درج کرتے ہوئے محنت کش محمد افضل نے بیان ریکارڈ کرایا کہ مجھے محمد سجاد بلوچ کی طرف سے دھمکیاں مل رہی تھیں کہ آپ نے تشدد کر کہ میری اہلیہ شمیم بی بی کو زخمی کیا ہے میں بھی آپ کی بیٹی یا اہلیہ کو مزہ چکھاوں گا اور ہسپتال پہنچاوں محمد افضل بلوچ نے کہا کہ یہ حرکت سجاد بلوچ نے ہی کرائی ہے.تا حال پولیس نے مقدمہ درج نہ کیا ہے بلکہ محمد سجاد اور بچی کے والد محمد افضل کو بھی گرفتار کر لیا گیا اور محمد سجاد بلوچ کو رہا کرنے پر مقدمہ کا اندراج نہ کرنے پر موضع کبیر پور کے رہائشیوں ہے ناقص تفتیش پر احتجاجی مظاہرہ کیا متاثرہ شبانہ نے والدہ کے ہمراہ احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ پٹاخہ نما مواد کوئی چیز پھینک کر میرا جسم جل گیا ہے میری زندگی برباد کر دی ہے مجھے حکام اعلی' سے انصاف کی اپیل ہے۔موضع کبیرپور کے متاثرین سید نذر حسین شاہ، سید ثقلین بخاری، سبطین گیلانی، محمد حسین خان بلوچ، محمد افضل بلوچ، سید صدام حسین،جان محمد، محمد حنیف، محمد عبدالمجید کے علاوہ بیسوں افراد نے احتجاجی مظاہرہ کیا اور حکام بالا سے قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

حملہ

مزید : ملتان صفحہ آخر