40 سال قبل ٹیم کے ہاتھوں ریپ ہونے والی لڑکی کو انصاف کی تلاش

40 سال قبل ٹیم کے ہاتھوں ریپ ہونے والی لڑکی کو انصاف کی تلاش
40 سال قبل ٹیم کے ہاتھوں ریپ ہونے والی لڑکی کو انصاف کی تلاش

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں 41سال قبل رگبی ٹیم کے کھلاڑیوں کے ہاتھوں اجتماعی زیادتی کا شکار ہونے والی خاتون بالآخر دو گواہوں کو تلاش کرنے کے لیے خود نکل کھڑی ہوئی۔ دی مرر کے مطابق اس خاتون کی عمر اس وقت 17سال تھی جب 1978ءمیں برطانوی شہر پلیمتھ میں رگبی ٹیم کے کئی کھلاڑیوں نے ہوٹل کے کمرے میں اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔

اس انسانیت سوز واقعے کے بعد اسے رگبی ٹیم کے دو دیگر ممبر ایک اور ہوٹل میں لے گئے۔ خاتون کو انہی دو لوگوں کی تلاش ہے جو اس کے ساتھ ہونے والی زیادتی کے گواہ ہیں۔ 59سالہ خاتون نے ان دونوں مردوں سے اپیل کی ہے کہ وہ گواہی دینے کے لیے سامنے آئیں تاکہ مجرموں کو سزا ہو سکے۔ اپنی اپیل میں خاتون نے ان دونوں مردوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ”تم دونوں نے میرے ساتھ ہونے والی اس بربریت کو روکا اور مجھے ان کے چنگل سے چھڑا کر لے گئے۔ تمہیں اپنی ٹیم کے اراکین کی اس حرکت پر شدید ندامت اور دکھ کا اظہار بھی کیا تھا۔“

خاتون نے مزید کہا کہ ”اب میں تمہیں بتانا چاہتی ہوں کہ اس وقت میں بالکل نوعمر تھی۔ میں بہت خوفزدہ تھی اور یہ سب آپ کے ٹیم ممبر کی وجہ سے ہوا۔ میں نے زندگی کے 41سال جس کرب اور اذیت میں گزارے ہیں، وہ میں ہی جانتی ہوں۔ صرف آپ دو لوگ ہی ہو جو ان لوگوں کی اصل شناخت جانتے ہو۔ پلیز آپ لوگ سامنے آئیے اور ان مجرموں کی شناخت کرنے میں پولیس کی مدد کیجیے اور عدالت میں ان کے خلاف گواہی دیجیے۔“

مزید : برطانیہ