متحدہ اپوزیشن کا25جولائی کو یوم سیاہ،5مقامات پر احتجاجی جلسوں کا اعلان

  متحدہ اپوزیشن کا25جولائی کو یوم سیاہ،5مقامات پر احتجاجی جلسوں کا اعلان

  

لاہور(این این آئی)رہبر کمیٹی کے فیصلے کے مطابق 25جولائی کو یوم سیاہ منانے کے حوالے سے پروگراموں کو حتمی شکل دینے کیلئے اپوزیشن رہنماؤں کا اہم اجلاس مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹریٹ ماڈل ٹاؤن میں منعقد ہوا، اجلاس میں فیصلہ کیا گیا یوم سیاہ کے سلسلہ میں صوبائی دارا لحکو متوں کے صدر مقامات پر احتجاجی جلسے کئے جائیں گے اور اس سلسلہ میں لاہور میں چیئر نگ کراس چوک میں جلسہ منعقد کیا جائیگا۔ مسلم لیگ (ن) کی میزبانی میں اپوزیشن رہنماؤں کا اجلاس ماڈل ٹاؤن سیکرٹریٹ میں ہوا جس میں پاکستان پیپلزپارٹی، جمعیت علمائے اسلام (ف)، عوامی نیشنل پارٹی اور جمعیت اہلحدیث کے وفود نے شرکت کی۔ مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال کی صدارت میں ہو نیو الے اجلاس میں ملک کی مجموعی صورتحال، اپوزیشن کی گرفتاریوں، مہنگائی کی صورتحال اور خصوصاً25جولائی کو یوم سیاہ کے پروگراموں کے حوالے سے تبادلہ خیال اور حکمت عملی مرتب کی گئی۔اجلاس کے بعد دیگر رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے عظمیٰ بخاری نے کہا متحدہ اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کے فیصلے پر 25جولائی کو یوم سیاہ منانے کا حتمی فیصلہ ہواہے۔ متحدہ اپوزیشن 25جولائی کو چیئرنگ کراس پر شام پانچ بجے جلسہ کرے گی،ہم صرف سکیورٹی کے تناظر میں انتظامیہ کو آگاہ کرینگے اور اجازت طلب نہیں کریں گے۔ 25جولائی مہنگائی، ملک کے معاشی حالات اور سلیکٹڈ وزیر عظم کی نالا قائیوں کیخلاف عدم اعتماد ہوگا، بزدل وزیر اعظم کان کھول کر سن لے ہمیں کسی اجازت کی ضرورت نہیں،پانچ مختلف جگہوں پر فیصلہ کریں گے کہ کون کون سی لیڈر شپ کہاں کہاں جائیگی۔ عمران خان نے کہاتھاان کیخلاف 100 لوگ نکل آئیں تو گھر چلا جاؤں گااب 100 نہیں لاکھوں لوگ بزدل وزیر اعظم کیخلاف نکلیں گے،عمران خان خود گھر چلا جائے وگرنہ بڑی رسوائی سے باہر نکلے گا۔ پنجاب فرانزک لیبارٹری نے جج ویڈیو کو درست ثابت کر دیا اب سپریم کورٹ نوٹس لے۔جے یو آئی (ف) پنجاب کے امیر ڈاکٹر عتیق الرحمن نے کہا حکومت کی ایک سالہ کی کارکردگی پوری قوم کے سامنے ہے جس میں ملک کا معاشی قتل کیاگیا ہے۔ ملک کی تاجر برادری نے تاریخی ہڑتال کی ہے، یہ نقطہ آغاز تھا،دوسرا قدم یوم سیاہ ہے ہم اس جنگ کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔ جے یو آئی (ف)25جولائی کو پشاور،28جولائی کو کوئٹہ اور اس کے بعد اسلام آباد جانے کی تاریخ دے گی او ریہ فائنل راؤنڈ ہوگا اور ہم حکومت کو رخصت کرنے تک واپس نہیں آئیں گے۔ لاہور کا تاریخی اجتماع حکومت اور اس کی پالیسیوں کیخلاف ریفرنڈم ثابت ہوگا،اگر حکومت اوچھے ہتھکنڈ ے استعمال کر کے پہلے گھر جانا چاہتی ہے تو یہ اقدام بھی کر کے دیکھ لے۔ پیپلز پارٹی پنجاب کے پارلیمانی لیڈر سید حسن مرتضیٰ نے کہا 25جولائی کو یوم سیاہ کے موقع پر تمام سیاسی و مذہبی جماعتیں ملک بھر میں احتجاج کریں گی، مختلف مقامات پر مختلف جماعتیں اسکی میزبانی کریں گی۔ایک کوارڈی نیشن کمیٹی بنائی گئی ہے جو یوم سیاہ کے حوالے سے رابطے میں رہے گی اور فیصلے کرے گی۔ہم حکومت سے اجازت طلب نہیں کریں لیکن اسے سکیورٹی کے تناظرمیں ضرور اطلاع ضرور کریں گے۔ سلیکٹڈ وزیر اعظم نے پانچ سالوں میں کنٹینرز پر احتجاج کیا اورلاک ڈاؤن کیا،غیر قانونی کام اورآزادی اظہار کی شکل میں گالی گلوچ کی سیاست متعارف کروائی لیکن اب بہت ہو چکا۔ متحدہ اپوزیشن کسی گرفتاری سے بلیک میل ہو گی نہ ہی گرفتاری کی آڑ میں حکومت سے ڈرے گی۔پیپلزپارٹی متحدہ اپوزیشن کیساتھ مل کر تاریخی احتجاج کر ے گی،یہ احتجاج سیاسی جماعتوں میں نااتفاقی کی بات کرنیوالوں کے منہ پر طمانچہ ہوگا۔

متحدہ اپوزیشن

کراچی(آن لائن)پیپلزپارٹی نے 25جولائی کو اپوزیشن کے ملک گیر یوم سیاہ کے سلسلے میں کراچی میں جلسے کے انتظامات کو حتمی شکل دے دی۔اس حوالے سے پیپلزپارٹی سندھ کے صدر نثار کھوڑو کی صدارت میں پیپلز پارٹی کراچی ڈویژن کا اہم اجلاس ہوا۔ اجلاس میں صوبائی جنرل سیکریٹری وقار مہدی، کراچی ڈویژن کے صدر و صوبائی وزیر بلدیات سعید غنی و دیگر رہنماؤں نے شرکت کی،اجلاس میں 25جولائی کو اپوزیشن کے ملک گیر یوم سیاہ کے سلسلے میں کراچی میں جلسے کے انتظامات کو حتمی شکل دے دی گئی۔ ترجمان کے مطابق 25 جولائی کو یوم سیاہ کے سلسلے میں اپوزیشن جماعتوں کا مرکزی جلسہ مزار قائد کے قریب ہوگا۔ جلسے میں پیپلز پارٹی سمیت اپوزیشن جماعتوں کے لاکھوں افراد شرکت کرینگے۔ جلسے سے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سمیت دیگر اپوزیشن کی قیادت خطاب کرے گی۔ اس موقع پر پیپلزپارٹی سندھ کے صدرنثار کھوڑو نے اجلاس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 25جولائی کا جلسہ عوام دشمن وفاقی بجٹ، ٹیکسز اور عذاب خان کی حکومت سے نجات کے لئے عوام کی آواز ثابت ہوگا۔ سلیکٹڈ وزیراعظم اور ان کی ناکام عوام دشمن پالیسیوں کی وجہ سے عوام کا جینا محال ہوگیا ہے اور ملک پیچھے چلا گیا ہے۔ عوام کی متفقہ آواز ہے کہ سلیکٹڈ وزیراعظم کو لانے والے سلیکٹرز اپنے فیصلے پر نظرثانی کریں۔ ملک بھر میں گو عمران گو کے نعرے لگنا شروع ہو چکے ہیں، اس لئے عمران خان کو چاہئے کہ استعفیٰ دے کر اقتدار چھوڑ دیں۔ کہیں حکمرانوں کو عوام سے این آراو نہ لینا پڑ جائے۔ عمران خان اپنی ناکامی چھپانے کے لئے ملک میں سیاسی ماحول کو خراب کر رہے ہیں۔ملک اور صوبوں کی معاشی مضبوطی اور عوام کو ریلیف دینے کے لئے مفاہمت ہی بہتر آپشن ہے۔ 

نثار کھوڑو

مزید :

صفحہ آخر -