فضل الرحمن وزیر اعظم کا استعفیٰ لیتے لیتے چیئرمین سینیٹ تک پہنچ گئے، شیخ رشید

      فضل الرحمن وزیر اعظم کا استعفیٰ لیتے لیتے چیئرمین سینیٹ تک پہنچ گئے، ...

  

لاہور(آئی این پی ) پاکستان ریلوے نے میانوالی ایکسپریس کے بعد مزید نئی ٹرینیں نہ چلانے کا فیصلہ کیا ہے، وزیر ریلوے نے کہا ہے کہ عمران خان کی قیادت میں ریلوے کی جتنی خدمت ہوسکی کروں گا، مال گاڑیوں سے مقررہ اہداف سے زیادہ ;200;مدن حاصل ہوئی، بڑے ادارے ریلوے میں سرمایہ کاری کیلئے تیار ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق وزیر ریلوے شیخ رشید نے 36 نئی ٹرینوں کے اوقات کار اور انہیں رواں دواں رکھنے پر زور دیا ہے ۔ ریلوے حکام کا بتانا ہے کہ وزیر ریلوے کی جانب سے موجودہ ٹرینوں کے اوقات کار اور انہیں رواں دواں رکھنے کے بعد مزید نئی ٹرینیں نہ چلانے کا فیصلہ کیا گیا ۔ دوسری جانب پاکستان ریلوے نے محکمے سے ریٹائرڈ ڈرائیوروں کو ایک سال کے کنٹریکٹ پر بھرتی کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے ۔ اس حوالے سے ریلوے ذراءع کا کہنا ہے کہ ڈرائیور تیار کرنے میں 8 سے 10 سال لگتے ہیں جس بنا پر ریٹائرڈ ڈرائیوروں کو رکھنے کا فیصلہ کیا گیا اور نئے ڈرائیوروں کی بھرتیوں کا سلسلہ بھی جاری ہے ۔ علاوہ ازیں ریلوے حکام نے ٹرینوں میں تاخیر کی وجہ کراچی سے ٹرینوں کی تاخیر سے روانگی کو قرار دیا ہے ۔ ریلوے ہیڈ کوارٹر لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر ریلوے شیخ رشید نے کہا کہ عمران خان کی قیادت میں ریلوے کی جتنی خدمت ہوسکی کروں گا، مال گاڑیوں سے مقررہ اہداف سے زیادہ ;200;مدن حاصل ہوا، بڑے ادارے ریلوے میں سرمایہ کاری کیلئے تیار ہیں ۔ شیخ رشید نے دعوی کیا کہ ہم نے 5 ارب روپے ریلوے کا خسارہ کم کیا ہے اور ریلوے کے ریونیو میں اضافہ ہوا ہے ۔ وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ملک میں تمام چوروں کو ٹکٹکی لگے گی ۔ شیخ رشید کا کہنا تھا دنیا کے بڑے ادارے ریلوے ورکشاپوں پر سرمایہ کاری کرنا چاہتے ہیں ، ٹرینوں کی تاخیر کا نوٹس لیا ہے ۔ ریلوے نظام کی بہتری کیلئے کنٹریکٹ پر بھرتیاں کی جائیں گی، ملازمین کی مستقلی کیلئے ہدایات جاری کر دیں ، 6 ماہ بعد ریلوے ملازمین کی تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ کیا جائے گا ۔ وفاقی وزیر ریلوے نے مزید کہا کہ ڈالر اور تیل کی قیمتیں بڑھنے سے مشکلات ہوئیں ، ہم نے 5 بلین کا خسارہ کم کیا ہے، ریلوے کی زمینوں پر قائم تجاوزات کا مکمل خاتمہ کیا جائے گا ۔

شیخ رشید

مزید :

صفحہ آخر -