سٹیٹ بینک نے پائلٹ آپریشنز کی منظوری دیدی،پے فاسٹ

سٹیٹ بینک نے پائلٹ آپریشنز کی منظوری دیدی،پے فاسٹ

  

لاہور(پ ر)پاکستان میں 3G / 4Gصارفین کی تعداد 8 کروڑ سے زائد ہوگئی ہے، یہاں ای کامرس کے بھرپور مواقع ہیں اور ایک تخمینہ کے مطابق سالانہ اوسط 58 فیصد ترقی کے ساتھ 2 ارب ڈالر کی مارکیٹ ہے۔ کورونا وائرس کے باعث آن لائن ادائیگیوں میں تیزی آئی ہے اور صارفین کی ترجیح ادائیگی کے لئے کیش سے کیش لیس ذرائع کی جانب آنا شروع ہوچکی ہے۔ تاہم اس مارکیٹ کو مزید بہتر بنایا جاسکتا ہے، اگر کیش پر چلنے سے چلنے والی معیشت میں شکوک و شبہات کا ازالہ کرکے کیش آن ڈیلیوری کی 90 فیصد ٹرانزایکشنز آن لائن لائی جائیں۔ اسکے پاس ای کامرس کے 1500 سے زائد فعال مرچنٹس ہیں تاہم ان کا بڑا حصہ نظر انداز رہ جاتا ہے۔ اتنی کم تعداد کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ اوپن اے پی آئیز، پلگ انز وغیرہ جیسے انٹیگریشن کے مختلف موڈز کے ساتھ موثر لاگت، تیزرفتار اور محفوظ آن لائن پیمنٹ کی سہولیات سے ہم آہنگی کا فقدان ہے۔ پے فاسٹ یوزر سینٹرک یو آئی / یو ایکس کے ساتھ مختلف ذرائع سے پیمنٹ کی قبولیت فراہم کرکے ان مسائل کا تدارک کیا جاتا ہے۔ ان میں یونین پے اور دیگر کارڈ اسکیمز کے کارڈز، موبائل والٹس اور بینک اکاؤنٹس نمبرز بھی ادائیگی کے باسہولت ذرائع کے طور پر شامل ہیں۔ وہ ڈیجیٹل سائن اپ، آسانی سے کام کرنے والی ڈیولپرز کی اے پی آئیز، ای کامرس اسٹورز کے لئے پلگ انز پیش کرکے مستقبل کی پیمنٹس کے استعمال میں باسہولت انداز سے مرچنٹس کو آن لائن پیمنٹس کی ادائیگیوں میں بھی تعاون فراہم کررہے ہیں۔

پے فاسٹ پی سی آئی۔ ڈی ایس ایس سے مطابقت رکھنے والا ادارہ ہے جس کے ہمراہ فراڈ اور رسک مینجمنٹ کا انتہائی فعال نظام ہے جو صارف اور مرچنٹ کے لئے ٹرانزایکشن کی مطابقت اور سیکورٹی کو یقینی بناتا ہے۔ پے فاسٹ ڈیجیٹل انوائسنگ کی ایک مزید انقلابی سروس سامنے لارہا ہے۔ جس میں پیمنٹس کو ایک منفرد لنک کے ساتھ تسلیم کیا جاسکتا ہے، یہ ایف بی مرچنٹس، فری لانسرز وغیرہ کے لئے بہترین سروس ہے جس میں اس منفرد لنک کو واٹس ایپ، فیس بک میسنجر، ای میل اور موبائل نمبر کے ذریعے بھیجا جاسکتا ہے۔ پے فاسٹ ای کامرس انڈسٹری میں پیمنٹ گیٹ میں موجود خلا کو پْر کرے گا۔ اس کی اپنی گیٹ ویز کی خدمات اور خصوصیات کا اسٹرائپ، اسکوائر اور ریزرپے جیسے معروف بین الاقوامی گیٹ ویز سے باآسانی موازنہ کیا جاسکتا ہے۔ پے فاسٹ کے سی ای او سید عدنان علی نے ایک بیان میں کہا، "معاشرے میں ڈیجیٹلائزیشن لانا ہمارا عزم ہے اور بالخصوص کرونا کے بعد حالات میں یہ عمل معاشرے کے لئے ناگزیر ضرورت بن گیا ہے۔ ہمارا مقصد یہ ہے کہ اپنے معزز شراکت داروں اور صارفین کو باسہولت، پائیدار اور اعلیٰ معیار کی خدمات فراہم کرنے کے ساتھ ملکی معیشت کی ترقی میں بھی اپنا کردار ادا کریں۔ ہم انتہائی پرجوش ہیں کہ پے فاسٹ ملکی معیشت کو ڈیجیٹلائز بنانے میں انتہائی فعال کردار ادا کرنے کے ساتھ ہی ساتھ پاکستان کو کیش لیس بنانے کے سفر میں بھی قائدانہ کردار ادا کرے گا۔ "پے فاسٹ بینکنگ انڈسٹری کا پہلے سے ہی اعتماد حاصل کرچکا ہے کیونکہ اسکے پارٹنر بینکوں کا پورٹ فولیو 12 بینکوں تک پھیل چکا ہے جن میں الائیڈ بینک، عسکری بینک، بینک آف پنجاب، دبئی اسلامک بینک، فیصل بینک، فنکا مائیکروفنانس بینک، حبیب میٹرو بینک، سمٹ بینک، یو بینک، جے ایس بینک، ٹیلی نار بینک، اور این آر ایس پی بینک شامل ہیں۔ مرچنٹ کی تعداد میں بھی تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور یہ بڑھ کر 150 سے تجاوز کرچکی ہے۔ اس رفتار سے پے فاسٹ بہت جلد نئی کامیابیاں سمیٹنے کے لئے پوری طرح تیار ہے۔ پے فاسٹ سے متعلق مزید تفصیلات کے لئے آپ اسکی ویب سائٹ (www.apps.net.pk) وزٹ کرسکتے ہیں۔

مزید :

صفحہ اول -