سینیٹ، چینی سمیت دیگر شعبوں میں اجارہ داری ختم کرنے کیلئے مسابقتی کمیشن کو مضبوط بنانے کا مطالبہ

  سینیٹ، چینی سمیت دیگر شعبوں میں اجارہ داری ختم کرنے کیلئے مسابقتی کمیشن کو ...

  

اسلام آباد(آن لائن)ارکین سینیٹ نے ملک میں چینی،سیمنٹ،ادویات اور آٹو موبائل سمیت دیگر شعبوں میں اجارہ داری کو ختم کرنے کیلئے مسابقتی کمیشن آف پاکستان کو مضبوط بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔ پیر کے روز ایوان بالاء کے اجلاس میں مسابقتی کمیشن آف پاکستان کو موثر بنانے کے حوالے سے تحریک پر بحث کا آغاز کرتے ہوئے سینیٹرمیاں عتیق شیخ نے کہا کہ ملک میں اجارہ داری کی وجہ سے عوام کو بے حد مسائل درپیش ہیں ملک میں آٹے،چینی،گھی،سیمنٹ اور ادویات ہر شعبے میں کارٹیلائزیشن ہے اور چند گروپس اس پر قابض ہیں اور ملی بھگت کے ساتھ عوام پر بجلیاں گرائی جاتی ہیں۔سینیٹر عثمان کاکڑ نے کہا کہ اس وقت پوری دنیا پر سرمایہ دار قابض ہیں اور ملٹی نیشنل کمپنیوں کا منافع حکومتوں سے زیادہ ہے۔ ملک کے سرمایہ دار جاگیردار اور صنعتکار عالمی سامراجی قوتوں کے ایجنڈے پر کام کررہے ہیں۔وزیر مملکت علی محمد خان نے کہا کہ ذخیرہ اندوزی کو کنٹرول کرنا صوبوں کا کام ہے۔2007ء سے اب تک115 انکوائریاں مکمل کی ہیں اور مجموعی طور پر 27 ارب روپے کے جرمانے عائد کئے ہیں۔چیئرمین سینیٹ نے مسابقتی کمیشن پر مزید بحث کیلئے تحریک کو متعلقہ کمیٹی کے حوالے کرنے کی ہدایت کردی۔علاوہ ازیں ایوان بالا نے بلوچستان اسمبلی کی سیٹوں میں اضافے سے متعلق آئینی ترمیمی بل متفقہ طور پر منظور کرلیا ہے،ایوان میں موجود71ممبران نے بل کے حق میں ووٹ دیا کسی بھی رکن نے مخالفت نہیں کی۔جبکہ ایوان بالا میں مختلف علاقوں میں ہائی کورٹ بنچز کے قیام کے حوالے سے آئینی ترمیم کا بل مسترد کر دیا گیا،بل مسلم لیگ(ن) کے سینیٹر جاوید عباسی نے پیش کیا۔ حکومتی بنچوں کی جانب سے بل کی مخالفت کے بعد چیئرمین سینیٹ نے بل پر رائے شماری کرائی تاہم بل مطلوبہ اراکین کی حمایت حاصل نہ کرسکا۔

سینیٹ اجلاس

مزید :

صفحہ آخر -