قومی ٹیم کے لئے حریفوں کو زیر کرنا چیلنج ہو گا

قومی ٹیم کے لئے حریفوں کو زیر کرنا چیلنج ہو گا

ہاکی کے میگا ایونٹ ورلڈ ہاکی لیگ کا آغاز ہو چکا ہے، جس میں دنیا بھر سے ہاکی کی ٹیمیں ایک دوسرے کے خلاف مقابلہ کے لئے میدان میں اترے گی ورلڈ کپ ایونٹ کے بعد اس ایونٹ کو خاص اہمیت اس لحاظ سے حاصل ہے، کیونکہ اس میں تمام ٹیمیں شرکت کرتی ہیں اور شائقین کو بہت دلچسپ مقابلے دیکھنے کو ملتے ہیں اس ایونٹ میں پاکستان ہاکی ٹیم بھی شرکت کر رہی ہے، جس کو اپنے پول میں بھارت سے بھی مقابلہ کرنا ہے، جبکہ دیگر ٹیمیں بھی بہت مضبوط حریف ہیں جن میں آسٹریلیا بھی شامل ہے اور ان سے مقابلہ کے لئے بظاہر تو پاکستان ہاکی ٹیم نے بہت تیاری کی ہے، لیکن یہ تو تب ہی پتہ چلے گا جب ٹیم میدان میں اترے گی پاکستان ہاکی ٹیم کے لئے یہ ایونٹ بہت زیادہ اہمیت کا حامل ہے، کیونکہ اس میں عمدہ پرفارمنس سے ہی پاکستان کی ہاکی ٹیم اولمپکس گیمز میں شرکت کرے گی اور اس میں اس کو عمدہ پرفارمنس دکھانا ہوگی پاکستان کو ٹف ٹیموں سے نبرد آزما ہونے کی ضرورت ہے اور ہر ٹیم کے خلاف ہی اس کی عمدہ پرفارمنس ہونی چائے۔ بہرحال ٹیم کے کھلاڑی میدان میں اتر کر کیسی پرفارمنس دیتی ہے اس کا شائقین کو شدت سے انتظار ہے اور امید ہے کہ ٹیم کے کھلاڑی عمدہ کھیل سے شائقین کے دِل جیتنے میں کامیاب ہوجائیں گے پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان 24جون کو کھیلے جانے والا میچ بہت اہمیت کا حامل ہے اور اس میچ میں پاکستانی ٹیم کو میچ جیتنے کی ضرورت ہے اور امید ہے کہ اس میچ میں پاکستان کی ٹیم عمدہ پرفارمنس کا مظاہرہ کرے گی۔ دوسری جانب پاکستان اور بھارت کی ہاکی ٹیمیں بھی ایک دوسرے کے مدمقابل ہورہی ہیں اوراس مقابلہ کا نہ صر ف پاکستان اور بھارت کے شائقین کو شدت سے انتظار ہے، بلکہ اس کے ساتھ ساتھ اس میچ کا پوری دُنیا کے شائقین ہاکی کو انتظار ہے اس میچ میں پاکستانی ٹیم کی کامیابی کے لئے بہت زیادہ محنت درکار ہوگی دونوں ٹیموں کے درمیان ہمیشہ ہی بہت سخت مقابلے ہوئے ہیں اور ہمیشہ ہی دونوں ٹیموں نے ایک دوسرے کو ٹف ٹائم دیا ہے اور اس حوالے سے پاکستان ہاکی ٹیم کے کپتان محمد عمران نے کہا ہے کہ ٹیم بھرپور تیاری کے ساتھ میدان میں اترے گی اور شائقین کی امیدوں پر پورا اترے گی۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان ہاکی ٹیم متوازن کھلاڑیوں پر مشتمل ہے اور محنت سے عمدہ کھیل پیش کریں گے۔ انہو ں نے کہا کہ ہرٹیم ہمارے لئے آسان حریف نہیں ہے اور ہر ٹیم کے خلاف ہی ہم عمدہ پرفارمنس کا مظاہرہ کریں گے۔ دوسری جانب اس ایونٹ کو پاکستان ہاکی ٹیم کے لئے آسان قرار نہیں دیا جارہا ہے اس کی وجہ ایک تو سخت ٹیموں کا آپس کا مقابلہ ہے اور دوسراپاکستان ٹیم کے لئے اس ایونٹ میں عمدہ پرفارمنس دینا بہت ضروری ہے اور امید ہے کہ کھلاڑی جس عزم کے سماتھ گئے ہیں وہ عمدہ کھیل سے اپنی اہلیت کو ثابت کرے گا، جبکہ شائقین کو بھی اس حوالے سے امید ہے کہ ٹیم طویل عرصہ کے بعد میگا ایونٹ میں ضرور اچھی پرفارمنس کا مظاہرہ کرنے میں کامیاب ہو گی اور ہماری امیدوں پر پورا اترے گی۔ یہ امتحان بس اب شروع ہونے والا ہے او امید ہے کہ ٹیم اس میں ضرورپوری اترے گی۔

***

مزید : ایڈیشن 1