چین نے مقامی مائیکرو چپس استعمال کر کے دنیا کا تیز ترین سپر کمپیوٹر تیارکرلیا

چین نے مقامی مائیکرو چپس استعمال کر کے دنیا کا تیز ترین سپر کمپیوٹر ...

بیجنگ (اے پی پی) چین نے مقامی مائیکرو چپس استعمال کر کے دنیا کا تیز ترین سپر کمپیوٹر تیارکرلیا ہے جس میں پہلی مرتبہ امریکی ٹیکنالوجی کو استعمال نہیں کیاگیا۔ ٹاپ500 سروے آف سپر کمپیوٹرز کے مطابق " دی سن وے تیہولائٹ" پہلے تیز ترین کمپیوٹر سے رفتار میں دوگنا تیز ہے جو چین میں ہی تیار کیا گیا تھا مگر اس میں امریکی فرم ’’انٹیل‘‘ کی تیار کردہ چپس استعمال کی گئیں۔ سروے کے مطابق چین پہلی مرتبہ 167 ٹاپ رینک سپر کمپیوٹرز کے ساتھ امریکا سے آگے نکل گیا ہے جبکہ امریکا کے ٹاپ رینک سپر کمپیوٹرز کی تعداد 165 ہے۔ رپورٹ کے مطابق چین کے نیشنل سپرکمپیوٹر سنٹر میں موجود " دی سن وے تیہولائٹ" کو موسمیات اور لائف سائنس ریسرچ کیلئے استعمال کیا جائے گا۔ سروے کے مطابق دی سن وے تیہولائٹ کی ایجاد نے ان تمام قیاس آرائیوں کو ختم کر دیا ہے کہ چین کو سپر کمپیوٹنگ کے میدان میں مغرب پر انحصار کرنا ہوگا۔

مزید : کامرس