سید علی گیلانی کی عبدالحمید پرے کو پولیس کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی کی شدید مذمت

سید علی گیلانی کی عبدالحمید پرے کو پولیس کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی کی ...

سری نگر(کے پی آئی)کل جماعتی حریت کانفرنس (گ) کے چیئرمین سید علی گیلانی نے عبدالحمید پرے کو پولیس کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی دینے، حریت معاون جنرل سیکریٹری غلام نبی سمجھی کی مسلسل نظربندی، انصاف پارٹی سربراہ غلام احمد گلزار کو گرفتار کرکے حوالات میں رکھنے اور عبدالغنی بٹ سوپور کے گھر پر چھاپے ڈالنے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پی ڈی پی، بی جے پی مخلوط حکومت نے پوری ریاست میں خوف ودہشت کا ماحول قائم کیا ہے اور آزادی پسند قائدین کو ہر ممکن طریقے سے سیاسی انتقام گیری کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ انہوں نے بلال صدیقی، حکیم عبدالرشید کو سرینگر سینٹرل جیل منتقل کرنے اور فیاض احمد داس کو مسلسل بند رکھنے پر بھی اپنی برہمی کا اظہار کیا اور ان کی فوری رہائی پر زور دیا۔ گیلانی نے ان پولیس افسروں کو متنبہ کیا جو حریت کارکنوں اور عام نوجوانوں کو حراست کے دوران میں تشدد کا نشانہ بناتے ہیں اور ان کے ساتھ بدتمیزی سے پیش آتے ہیں۔ بیان کے مطابق ایک پولیس افسر نے عبدل حمید پرے کو جیل میں سڑانے یا فرضی انکاؤنٹر میں جان سے مارنے کی دھمکی دی ہے۔ مذکورہ پولیس افسر اخوانی اور نابدی ٹائیپ کا ہے، جس نے لوگوں کا جینا دوبھر کردیا ہے۔ عبدالحمید پرے کے علاوہ اس نے تحریک حریت کے ایک معمر شخص ماسٹر علی محمد کی تھانے میں مارپیٹ کی اور ان کی بزرگی کا بھی کوئی لحاظ نہیں کیا ۔ حریت بیان میں کہا گیا کہ اس طرح کے ظالموں کو یاد رکھنا چاہیے کہ وہ اللہ تبارک وتعالی کے عذاب سے بھاگ نہیں سکتے ہیں اور انہیں دنیا کی کوئی بھی طاقت پناہ نہیں دے سکتی ہے۔ حریت چیئرمین نے خبردار کیا کہ سیاسی سرگرمیوں پر عائد پابندیاں ریاست کی سیاسی غیریقینیت اور عدمِ استحکام کی صورتحال میں اضافے کی باعث بن رہی ہیں اور اس سے حالات دن بدن خراب ہونے کا احتمال پیدا ہوگیا ہے۔

مزید : عالمی منظر