صحت اور تعلیم کیلئے مختص ترقیاتی بجٹ سے عوامی شکایات دورکرینگے، عائشہ غوث

صحت اور تعلیم کیلئے مختص ترقیاتی بجٹ سے عوامی شکایات دورکرینگے، عائشہ غوث

لاہور(نمائندہ خصوصی )صوبائی وزیر خزانہ ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا نے کہا ہے کہ صحت اور تعلیم کی مد میں مختص کردہ ترقیاتی بجٹ عوامی شکایات کے ازالے پر خرچ کیا جائے گا ۔s THQ اور DHQsسمیت تمام سرکاری ہسپتالوں میں عدم دستیاب سہولیات مہیا کی جائیں گی ۔ تحصیل اور ضلع کی سطح کے ہسپتالوں کو بڑے شہروں کے ہسپتالوں جیسی سہولیات سے آراستہ کیا جائے گا تمام ہسپتالوں میں ICU، ٹراما اور برن سنٹر قائم کیے جائیں گے تاکہ حادثات کی صورت میں دوردراز علاقوں سے متاثرین کو بڑے شہروں کی طرف بھاگنے کی ضرورت پیش نہ آئے اور انہیں علاج کی تمام سہولیات اپنے ہی علاقے میں دستیاب ہوں ۔ کم آمدن والے طبقے کو کوالٹی ایجوکیشن کی فراہمی کے لئے پرائمری سکولوں کی اپ گریڈیشن کی جائے گی ۔ انفراسٹرکچر سے لے کر تدریسی طریقے کار تک تمام مسائل حل کئے جائیں گے ۔ مخدوش عمارتوں والے سکولوں کی تعمیر نو اور اساتذہ سے محروم تعلیمی اداروں میں حاضریاں یقینی بنائی جائیں گی ۔ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر نے اراکین اسمبلی کوپوسٹ بجٹ بریفنگ کے دوران کیا ۔ ڈاکٹر عائشہ غوث پا شا نے اراکین کو بتا یا کہ دیہاتوں سے شہروں کی جانب ہجرت کے رجحان کو کم کرنے کے لئے زرعی شعبہ میں اصلاحات کے ساتھ ساتھ دیہاتوں میں شہری سہولیات مہیا کی جائیں گی ۔اس مقصد کے لیے رابطہ سڑکوں کی تعمیر کا آغاز کر دیا گیا ہے جس کے لئے آئندہ بجٹ میں 150ارب روپے مختص کئے گئے ہیں ۔بچیوں کی سکولوں میں انرولمنٹ بڑھانے کے لیے ان کے لیے مقررہ ماہانہ وظیفے کو 200روپے سے بڑھا کر 1000کر دیا گیا ہے ۔ ہسپتالوں کی گنجانی پر کنٹرول کرنے کے لئے چھوٹے شہروں اور دیہی علاقوں میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی اور نکاسی کے نظام کو بہتر بنایا جا رہا ہے ۔ ۔جنوبی پنجاب کے وہ علاقے جنہیں نظر انداز کیے جانے کی شکایت تھی وہاں مختلف ترقیاتی منصوبے شروع کئے جارہے ہیں ۔ جن کے لیے مجموعی طور پر 173ارب روپے کی خطیر رقم مختص کی گئی ہے ۔ پنجاب ایجوکیشن کمیشن فاؤنڈیشن کے 67فیصد پارٹنر سکولوں اور 69فیصد طالبعلموں کا تعلق بھی جنوبی پنجاب کے دور دراز علاقوں سے ہے وزیر اعلیٰ پنجاب کی لیپ ٹاپ سکیم میں 50فیصد حصہ جنوبی پنجا ب کے طلبا و طالبات کے لئے مختص کیا گیا ہے جو آبادی کے تناسب سے 18فیصد زیادہ ہے ۔ صوبائی وزیر نے اراکین پر واضح کیا کہ سکول ایجوکیشن میں اصلاحات کے لیے ڈیفڈ یا کسی اور پرائیویٹ ادارے کی خدمات کے حصول سے ہر گز یہ مراد نہیں کہ حکومت سکولوں کی نجکاری کا ارداہ رکھتی ہے بلکہ اس سے ہمارا مقصد تعلیم کے میدان میں طبقاتی فرق کو ختم کتنا اور سرکاری سکولوں میں کوالٹی ایجوکیشن کو یقینی بنانا ہے ۔ ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا نے منتخب نمائندوں کو بتا یا کے تعلیم اور صحت سمیت تمام سرکاری محکموں سے کرپشن کے خاتمے کے لیے ای ما نٹرنگ سسٹم متعارف کر وا رہے ہیں ۔

مزید : صفحہ آخر